اپریل کویوم نفاذ امتناع قادیانیت ایکٹ منایا جائیگا

بدھ اپریل 20:58

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 18 اپریل2018ء) کل مسالک ’’ورلڈ پاسبان ختم نبوت‘‘ کے سربراہ علامہ محمد ممتاز اعوان اور مفتی عاشق حسین رضوی ،علامہ شعیب الرحمن قاسمی،مولانا نعیم بادشاہ سلفی اور وقار الحسنین نقوی نے کہا کہ 26اپریل 1984ء ہماری اسلامی اورملکی تاریخ کاوہ عظیم روشن ترین دن ہے کہ جس دن منکرین ختم نبوت قادیانی فتنہ کو اسلامی شعائر استعمال کرنے کوقانونی جرم قرار دیکرپابندی عائد کی گئی اس حوالے سے 26اپریل کو ملک بھر میں یوم نفاذ امتناع قادیانیت ایکٹ منایا جائیگا یاد رہے کہ1974ء کوپارلیمنٹ سے قادیانی آئینی طور پرغیر مسلم اقلیت قرار دیے جانے کے باوجودبھی اسلامی شعائر استعمال کرتے تھے اور قادیانی اسلام کا لبادہ اوڑھ کر اور اسلام کا جعلی ٹائٹل استعمال کرکے سادہ لوح مسلمانوں کو قادیانی کافر ومرتد بناتے تھے علامہ ممتاز اعوان نے کہا کہ سابق صدر مملکت جنرل ضیاء الحق نے ایک صدارتی آرڈیننس کے ذریعے قادیانیوں کے اسلامی شعائر استعمال پر پابندی کیلئے امتناع قادیانیت ایکٹ جاری کیا جسے بعد ازاں پارلیمنٹ اور سینیٹ سے منظوری کے بعد 1973ء کے متفقہ اسلامی آئین کا حصہ بنا دیا گیااس ایکٹ سے قادیانیوں کواسلامی شعائر استعمال کرنے کو قانونی جرم قرار دیکر اسلام کے بنیادی عقیدہ ختم نبوت کو تحفظ ملا ۔

(جاری ہے)

ورلڈ پاسبان ختم نبوت ودیگر دینی جماعتوں کے زیر اہتمام 26اپریل کو اس فیصلے کی یاد میں لاہور سمیت پورے ملک میں مختلف نوعیت کی تقریبات کاانعقاد کیا جائیگا