جرمن پولیس اہلکار پر حملہ کرنے والی لڑکی کی سزا، عدالت نے سابقہ فیصلہ بحال رکھا

جمعہ اپریل 10:00

برلن ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 اپریل2018ء) ایک اعلیٰ جرمن عدالت نے پولیس اہلکار پر چاقو سے حملہ کرنے کی ماتحت عدالت کی سزا کو بحال رکھا ہے۔

(جاری ہے)

جرمن نشریاتی ادارے کے مطابق فروری 2016 میں داعش کے ساتھ ہمدردی رکھنے والی جرمن مراکشی نژاد ٹین ایجر صفیہ ایس نے ہینوور ریلوے اسٹیشن پر متعین پولیس اہلکار کو چاقو کے وار کر کے زخمی کر دیا تھا۔ ماتحت عدالت نے لڑکی کو 6 برس کی قید سزا اور بچوں کی جیل میں رکھنے کا فیصلہ سنایا تھا۔ اعلیٰ عدالت میں مجرمہ کے وکیل نے یہ موقف اپنایا تھا کہ جہادی تنظیم داعش نے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی تھی۔ اس وقت صفیہ ایس کی عمر 17برس ہے۔