آپ کے پاس نہ لیبارٹری ہے نہ مشینری تو پانی کیسے ٹیسٹ کرواتے ہیں؟

سپریم کورٹ کا مناسب لیبارٹری نہ ہونے کی وجہ سے پشاور کا پانی پنجاب سے ٹیسٹ کرانے کا حکم

Mian Nadeem میاں محمد ندیم جمعہ اپریل 14:38

آپ کے پاس نہ لیبارٹری ہے نہ مشینری تو پانی کیسے ٹیسٹ کرواتے ہیں؟
پشاور(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔20 اپریل۔2018ء) سپریم کورٹ نے خیبرپختونخوا میں مناسب لیبارٹری نہ ہونے کی وجہ سے پشاور کا پانی پنجاب سے ٹیسٹ کرانے کا حکم دے دیا ہے۔جمعے کو سپریم کورٹ پشاور رجسٹری میں چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں 3رکنی بینچ نے صاف پانی سے متعلق کیس کی سماعت کی۔۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ یہ کیسا صوبہ ہے جہاں سیکرٹری کم تنخواہ لے رہا ہے جبکہ ہیلتھ کیئر کمیشن کا سربراہ سب سے زیادہ تنخواہ لے رہا ہے، سیکرٹری صاحب آپ تو بڑے معصوم آدمی ہیں، آپ کی زیرنگرانی کام کرنےوالے زیادہ تنخواہ کیسے لے رہے ہیں ؟۔

چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ سرکاری ہسپتال میں میٹرک پاس ڈاکٹر کیسے آگیا ؟ وزیراعلیٰ کے کہنے پر انکوائری کیوں بند کروائی گئی ؟۔

(جاری ہے)

چیف جسٹس نے جعلی ڈاکٹر قدرت اللہ کیخلاف انکوائری بند کرنے کی رپورٹ طلب کرتے ہوئے استفسار کیا کہ آ پ کے پاس نہ لیبارٹری ہے،نہ اعلیٰ مشینری تو کیسے پانی ٹیسٹ کرواتے ہیں۔۔چیف جسٹس نے پشاور کے مختلف مقامات سے پانی کے نمونے لے کر پنجاب کی لیبارٹری میں ٹیسٹ کروانے کا حکم دے دیا۔

قبل ازیںچیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے صوبہ خیبرپختون خوا میں عطائیوں کے کلینک ایک ہفتے میں بند کرنے کا حکم دے دیا۔۔چیف جسٹس کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے سپریم کورٹ پشاور رجسٹری میں صحت کی سہولتوں سے متعلق کیس کی سماعت کی جس کے دوران چیئرمین ہیلتھ کیئر کمیشن عدالت میں پیش ہوئے ،جنہوں نے بتایا کہ خیبرپختونخوا میں 15 ہزار عطاتائی ڈاکٹر ہیں۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ آپ نے کتنے عطائیوں کے خلاف کارروائی کی اور کتنے عطائیوں پر پابندی لگائی گئی ہے؟وہ عطائی کہاں ہے جو ہسپتال میں کام کرتے ہوئے گرفتار ہوا؟عطائی ڈاکٹر لوگوں کی زندگیاں تباہ کر رہے ہیں۔۔چیف جسٹس نے ہیلتھ کیئر کمیشن کے سربراہ سے استفسار کہ آپ کی اپنی تنخواہ کتنی ہے؟جس پر سربراہ ہیلتھ کیئر کمیشن نے بتایا کہ ان کی تنخواہ 5 لاکھ ہے۔جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ یہ کیسا صوبہ ہے جہاں چیف سیکرٹری 1 لاکھ 80 ہزار اور آپ 5 لاکھ روپے تنخواہ لے رہے ہیں،عطائیوں کے خلاف کارروائی کرنا آپ کی ڈیوٹی ہے۔۔چیف جسٹس نے ایک ہفتے کے اندر صوبے میں تمام عطائیوں کے دواخانے بند کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔