بیلٹ و روڈ منصوبہ عالمی امن کے فروغ کیلئے ’’عالمی اورکھلا‘‘ منصوبہ ہے ،

سابق وزیراعظم فرانس شرکاء ممالک میںبنیادی ڈھانچے کی ترقی میں سہولت کے نتیجے میں عوام کی فلاح و بہبود میں اضافہ ہو گا بین الاقوامی برادری امن کیلئے کوئی روڈ میپ مرتب کرے،اپنی کتاب کے چینی ترجمے کی تقریب رونمائی سے خطاب

جمعہ اپریل 21:22

بیجنگ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 اپریل2018ء) فرانس کے سابق وزیراعظم ڈومینک ویلی پن نے کہا ہے کہ بین الاقوامی برادری کو چاہے کہ وہ امن کیلئے کوئی روڈ میپ مرتب کرے کیونکہ امن دنیا بھر کے ممالک کی دلچسپی یا عوام کی خیر سگالی کی وجہ سے خود بخود نہیں آئیگا،انہوںنے ان خیالات کا اظہار ان کی کتاب’’جنگ اور امن‘‘کے چینی ترجمہ کی تقریب رونمائی سے خطاب کرتے ہوئے کیا،دی ویلی پن نے کہا ان کا پختہ یقین ہے کہ امن محض کشیدگی دور کرنے اور جنگوں کے خاتمے کا نتیجہ نہیں ہے تاہم اسے بین الاقوامی کا اہم مقصد ہونا چاہے اور اس کے لیے قوانین،طریقہ ہائے کار اور اداروں کی ضرورت ہے،بقول ان کے ان کی یہ کتاب بحیثیت سفارت کار ان کے تجربات اور دنیا بھر میں امن کے کلچر اور مفاہمت کے فقدان کے بارے میں ان کے خدشات پر مبنی ہے،انہوں نے تین اصول تجویز پیش کئے جن کے بارے میں ان کا خیال ہے کہ یہ امن کی جانب بڑھنے میں بین الاقوامی برادری کی مدد کر سکتے ہیں ان میں تمام ممالک کی خودمتخاری کا احترام پائیدار ترقی کی کوشش اور استحکام سے اتفاق کرنا اور اس کے لیے کوشش کرنا شامل ہے،فرانسی مدبر نے چین کے بیلٹ و روڈ منصوبے کے کردار کا بھی تجزیہ کیا جس سے انہوں نے عالمی امن کے فروغ کیلئے ’’عالمی اورکھلا‘‘ منصوبہ قرار دیا،انہوں نے کہا کہ اس منصوبے سے شرکاء ممالک میںبنیادی ڈھانچے کی ترقی میں سہولت پیدا کی ہے جس سے عوام کی فلاح و بہبود میں اضافہ ہو گا اور اس طرح ان مقامات پر استحکام پیدا کرنے میں مدد ملے گی،انہوں نے کہا کہ جیتنے زیادہ بنیادی ڈھانچے پیدا کئے جائیں گے مختلف عوام،معاشروںاور ممالک کے درمیان اتنے زیادہ رابطے قائم ہوں گے اور اس طرح ان علاقوں میں تنازعات میں کمی آئیگی۔