پشاور، پختونوں کے ساتھ معتصبانہ رویہ اور امتیازی سلوک نے ان میں پائی جانے والی مایوسیوں اور

محرومیوں کو مزید تقویت دی، آفتاب شیرپائو ْہ پختون قوم کی ایک بہت بڑی بد قسمتی تھی کہ 2013کے انتخابات کے بعد ان پر پی ٹی آئی جیسے خود غرض، مفادپرست اور غیر سنجیدہ حکمران مسلط ہوئے جن کا مقصد اقتدار کی کرسی کے حصول کے سواکچھ اور نہیں تھا،چیئرمین قومی وطن پارٹی

جمعہ اپریل 23:23

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 اپریل2018ء) قومی وطن پارٹی کے مرکزی چیئرمین آفتاب احمدخان شیرپائونے کہا ہے کہ مرکزی حکومت کی جانب سے پختونوں کے ساتھ معتصبانہ رویہ اور امتیازی سلوک نے ان میں پائی جانے والی مایوسیوں اور محرومیوں کو مزید تقویت دی ۔انھوں نے کہا کہ یہ پختون قوم کی ایک بہت بڑی بد قسمتی تھی کہ 2013کے انتخابات کے بعد ان پر پی ٹی آئی جیسے خود غرض، مفادپرست اور غیر سنجیدہ حکمران مسلط ہوئے جن کا مقصد اقتدار کی کرسی کے حصول کے سواکچھ اور نہیں تھا۔

انھوں نے کہا کہ پختون پی ٹی آئی کا اصل چہرہ جان چکے ہیں اور وہ آنے والے انتخابات میںووٹ کے ذریعے ان کو مسترد کرکے ایسے حکمرانوں کو منتخب کریں گے جو صحیح معنوں میں ان کے حقوق کیلئے جدوجہد کر سکے۔

(جاری ہے)

ان خیالات کا اظہار انھوں نے وطن کور پشاور میں ایک شمولیتی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پرپی ٹی آئی ضلع ہنگو کے معروف سیاسی و سماجی شخصیت اعصام الدین اورکزئی نے اپنے ساتھیوں اور خاندانوں سمیت قومی وطن پارٹی میں شمولیت کا اعلان کرتے ہوئے پارٹی قائد آفتاب احمد خان شیرپائو کی قیادت اور پالیسیوں پر اعتماد کا اظہار کیا۔

آفتاب شیرپائو نے کہا کہ این ایف سی ایوارڈ میں پختونوں کو ان کے حقوق سے محروم رکھنا ایک حیران کن امر ہے جس سے ان میں پائی جانے والی مایوسیوں اور پریشانیوں میں بے تحاشہ اضافہ ہوا۔انھوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ مرکزی حکومت پختونوں کے ساتھ ناروا سلوک ترک کرکے ان کی فلاح کیلئے یکساں طور پر اقدامات اٹھائے ۔انھوں نے کہا کہ قومی وطن پارٹی کے ہوتے ہوئے کسی بھی سطح پر پختونوں کے حقوق کی پامالی نہیں کی جاسکتی۔

آفتاب شیرپائو نے صوبائی حکومت کی ناکامیوں پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ صوبائی حکومت نے پختونوں کی روایات اور ان کے حقوق کو جو نقصان پہنچایا ہے اس کیلئے صوبہ کے عوام ان کو کبھی بھی معاف نہیں کرے گی۔انھوں نے کہا کہ یہ ایک افسوسناک اور دکھ کی گھڑی ہے جب چیف جسٹس آف پاکستان نے خودصوبے کا دورہ کیا اور یہاں پر تبدیلی کا حال دیکھ کر وہ دھنگ رہ گئے کہ تبدیلی کے دعویداروں نے در حقیقت صوبہ کو جنگل میں تبدیل کردیا ہے۔

انھوں نے کہا کہ آج صوبے کا یہ حال ہے کہ تاجر برادری یہاں پر تجارت کرنے کو تیار نہیں اور باہر سے بھی سرمایہ کاری کیلئے کوئی آمادہ نہیں ہو رہا۔صوبہ اپنے تاریخ کے تاریک ترین دور سے گزر رہا ہے ۔انھوں نے کہا کہ یہ ایک تعجب کی بات ہے کہ الیکشن سے چند ہفتے قبل ہی پی ٹی آئی لیڈر شپ نے 20صوبائی اسمبلی ممبران پر ہارس ٹریڈنگ میں ملوث ہونے کے الزامات لگا ئے تاکہ وہ اپنی کرپشن کی داستانوں کو چھپاسکے۔

انھوں نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت نے تو بیس ایم پی ایز کو بے نقاب کردیا لیکن کچھ لوگوں کو جن سے ان کے مفادات وابسطہ ہے کو چھپایا گیا جو وقت گزرنے کے ساتھ منظر عام پر آجائیں گے۔انھوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے چیئرمین وزیر اعظم بننے کیلئے پختونوں کے مستقبل کے ساتھ کھیل رہے ہیں ان کا مقصد اقتدار کے حصول کے سوا کچھ نہیں۔ آفتاب شیرپائو نے کہا کہ پی ٹی آئی ایک موقع پرست سیاسی جماعت ہے جس نے پختونوں کو اپنے مفادات کے حصول کیلئے استعمال کیا۔

انھوں نے کہا کہ بی آر ٹی جیسا میگا پراجیکٹ جس کیلئے بہت سا وقت اور سرمایہ درکار تھا صرف اس وجہ سے تاخیر سے شروع کیا گیا تاکہ آنے والے انتخابات میں ایک مرتبہ پھر پختونوں سے ووٹ بٹور سکے۔انھوں نے کہا کہ قومی وطن پارٹی ملک میں آباد پختونوں کے حقوق کی ترجمانی کر رہی ہے اور ان کی جماعت پختونوں کے حقوق کے حصول کیلئے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کرے گی۔