مقبوضہ کشمیر: انسانی حقوق کمیشن نے قابض انتظامیہ سے شوپیان میں لڑکی کے قتل کی رپورٹ طلب کرلی

اتوار اپریل 16:00

سرینگر ۔22 اپریل(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 اپریل2018ء) مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کمیشن نے شوپیان کے ڈپٹی کمشنر اور سینئر سپر انٹنڈنٹ پولیس کو نوٹس جاری کیا ہے کہ وہ دو ہفتے کے اندر تفصیلی رپورٹ پیش کریں کہ ضلع شوپیان میں 24جنوری کو صائمہ نامی لڑکی کو فوجی آپریشن کے دوران کس طرح گولی لگی جو بعد میں 10فروری کو زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئی چل بسی ہے۔

(جاری ہے)

کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق کمیشن نے متعلقہ افسروں کویہ بھی ہدایت کی ہے کہ وہ اس واقعے کے دوران بھارتی فورسز کی طرف سے قواعد وضوابط پر عملدرآمد کے بارے میں رپورٹ پیش کریں۔ انسانی حقوق کے کارکن محمد احسن انتو نے کمیشن کو دی گئی درخواست میں کہا ہے کہ صائمہ جو مجاہد سمیر وانی کی بہن تھی ، کو فوجی آپریشن کے دوران سر میں گولی ماری گئی ہے۔ انہوں نے کمیشن سے دوخواست کی ہے کہ واقعے کی تحقیقات کی جائے کہ صائمہ کو کس طرح سر میں گولی ماری گئی ہے جبکہ وہ ایک عام شہری تھی اور معصوم شہریوں کے جان کی حفاظت کرنا انتظامیہ کا فرض ہے۔ انہوں نے کمیشن پر زوردیا کہ وہ متعلقہ پولیس حکام سے صائمہ کی موت کے بارے میں رپورٹ طلب کرے۔