ملک میں کھیلوں کی ترقی کے لئے انفراسٹرکچر بہت ضروری ہے، ملک بھر میں 100 نئے اسٹیڈیم تعمیر کئے جائیں گے‘ نیشنل سپورٹس سٹی نارووال کا افتتاح صدر مملکت ممنون حسین 29 اپریل کو کریں گے‘ افتتاح کے موقع پر کرکٹ کا نمائشی میچ ہوگا

وفاقی وزیر داخلہ، منصوبہ بندی وترقی پروفیسر احسن اقبال کی صحافیوں سے گفتگو

اتوار اپریل 19:50

نارووال ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 اپریل2018ء) وفاقی وزیر داخلہ، منصوبہ بندی وترقی پروفیسر احسن اقبال نے کہا ہے کہ ملک میں کھیلوں کی ترقی کے لئے انفراسٹرکچر بہت ضروری ہے، ملک بھر میں 100 نئے اسٹیڈیم تعمیر کئے جائیں گے اور نیشنل سپورٹس سٹی نارووال کا افتتاح صدر مملکت ممنون حسین آئندہ اتوار 29 اپریل کو کریں گے‘ اس موقع پر کرکٹ کا نمائشی میچ ہوگا۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے گذشتہ روز نیشنل سپورٹس سٹی نارووال میں راولپنڈی اسلام آباد سے آئے ہوئے سپورٹس جرنلسٹس سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر پاکستان سپورٹس بورڈ کی جانب سے ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل منصور احمد، ایگزیکٹو انجینئر ایاز اکبر اور میڈیا ڈائریکٹر محمد اعظم ڈار بھی موجود تھے۔ انہوں نے کہا کہ نیشنل اسپورٹس سٹی نارووال کا منصوبہ 2009 ء میں شروع کیا تھا لیکن اس منصوبے کے لیے پیپلزپارٹی حکومت نے فنڈز جاری نہیں کیے، 18 ویں ترمیم کے بعد وزرات کھیل صوبوں کے پاس چلی گئی‘ 2013 میں ہماری حکومت نے آ کر نیشنل اسپورٹس سٹی نارووال کا کام دوبارہ شروع کیا۔

(جاری ہے)

اس منصوبے پر دو ارب روپے کی رقم خرچ ہوچکی ہے اور ایک ارب روپے مزید خرچ ہونگے، اور یہ منصوبہ اسی سال 2018ء میں مکمل ہوجائے گا، انہوں نے کہا کہ نیشنل اسپورٹس سٹی میں کرکٹ،، فٹ بال، ہاکی،،،ٹینس،، سکواش، اتھلیٹکس ٹریک، سوئمنگ پول، جم اور جمنازیم (انڈور کھیلوں کے مقابلوں) کے علاوہ کھلاڑیوں کی رہائش کے لئے تین ہوسٹل اور ایک انتظامیہ بلاک بھی تعمیر کئے گئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اسلام آباد، پشاور،، کراچی،، لاہور اور کوئٹہ کے بعد نیشنل اسپورٹس سٹی میں سب سے زیادہ سہولیات موجود ہیں اور اس میں شجرکاری کا کام بھی شروع کیا جارہا ہے۔ انہوں نے اس منصوبے کے لئے پنجاب حکومت نے پہلے 44 ایکڑ زمین الاٹ کی تھی لیکن بعد میں مختلف سپورٹس فیڈریشنوں اور پاکستان اولمپک ایسوسی ایشن کی تجویز ات پر کھلاڑیوں کو انٹرنیشنل سطح کی سہولیات فراہم کرنے کے لئے 12 ایکڑ اراضی کو مزید شامل کیا گیا ہے اسی طرح یہ منصوبہ 56 ایکڑ اراضی پر مشتمل ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ نیشنل اسپورٹس سٹی میں چودہ انٹرنیشنل کھیلوں کے مقابلے منعقد کروائے جائیں گے ان چودہ کھیلوں کے لئے ماہر کوچز کی خدمات بھی حاصل کی جائیں گی۔انہوں نے کہا کہ نیشنل اسپورٹس سٹی میں کھلاڑیوں کو انٹرنیشنل سطح کی ہر ممکن سہولت فراہم کی جائیں گی، انہوں نے کہا کہ نیشنل اسپورٹس سٹی کھیلوں کے ڈھانچے میں اچھا اضافہ ہو گا اورملک بھر میں 100 نئے اسٹیڈیم تعمیر کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کا انتظامی ڈھانچہ مفلوج ہو چکا ہے۔انہوں نے کہا کہ دس دس سال کے مارشل لاء لگائے دیئے جاتے ہیں،مارشل لاء کے بعد ملک کو کھوکھلا کر کے سیاستدانوں کے حوالے کیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومتوں کے تعاون سے ملک بھر میں 100 اسٹیڈیمز بنائیں جائیں گے۔اس حوالے سے 50 فیصد بجٹ وفاق کی جانب سے صوبوں کو فراہم کیا جائے گا 50 فیصد صوبائی حکومتیں خود سے لگائیں گی۔

اس اسپورٹس سٹی کو چلانے کے لیے خود مختار کمپنی ہوگی جو اس کے لیے فنڈز بھی جنریٹ کرے گی اور اسپانسر بھی لائے گی۔سپورٹس سٹی میں 4 اسٹار ہوٹل بھی ہوگا جبکہ اسپورٹس کلینکس بھی تعمیر کیے جائیں گے۔ایک سوال کے جواب میں پرفیسر احسن اقبال نے کہا کہ عمران خان بہت بڑے کھلاڑی ہیں لیکن کے پی کے میں کھیلوں کے حوالے سے آدھی سہولیات بھی فراہم نہ کر سکے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ نیشنل اسپورٹس سٹی سے نارووال، گوجرانوالہ، سیالکوٹ اور شیخوپورہ کے کھلاڑیوں کو بہت فائدہ پہنچے گا،،کرکٹ بورڈ اور ہاکی کے قومی کھلاڑیوں کی تربیت کے لئے کیمپ بھی لگائے جائیں گے۔آخر پر وفاقی وزیر داخلہ نے سپورٹس جرنلسٹس کے ہمراہ نیشنل اسپورٹس سٹی کے مختلف شعبوں کا دورہ بھی کیا اور وہاں پر فراہم کی جانے والی سہولیات کے بارے میں آگاہ کیا