پشاور میں تاجروں کے ریفنڈ انکم ٹیکس کی ادائیگی روکنے کے باعث تاجروں نے چیئر مین ایف بی آر سے مداخلت کی اپیل

اتوار اپریل 23:00

پشاور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 اپریل2018ء) پشاور میں تاجروں کے ریفنڈ انکم ٹیکس کی ادائیگی روکنے کے باعث تاجروں نے چیئر مین ایف بی آر سے مداخلت کی اپیل کی ہے تاجر وں کے مطابق مختلف ممالک سے مختلف اشیاء امپورٹ کررہی ہیں کنٹینر کی کنسائمنٹ پر باقاعدگی سے انکم ٹیکس ادا کرتے ہیں جبکہ بعد میں یہی رقوم تاجر مارکیٹ میں کاروبار کیلئے استعمال کرتے ہیں جبکہ سیلز ٹیکس کیساتھ انکم ٹیکس بھی ادا کرتے ہیں قانونا ان تاجروں کو انکم ٹیکس کے اہلکار جون میں گوشوارے جمع کرانے کے بعد محکمہ ان کی ری فنڈ ادائیگیاں واپس کرانے کی پابند ہیں تاہم خیبر پختونخواہ کے تاجروں کیساتھ سوتیلی ماں کا رویہ رکھا جارہا ہے وہ کاروبار سے وابستہ ہیں اور سال 2013ء سے ان کی کروڑوں روپے پھنسے ہوئے ہیں جو محکمے نے ریفنڈ ادائیگیاں کرنی ہیں لیکن ٹال مٹول سے کام لیا جارہا ہے دوسری طرف ہمیں بھی مارکیٹ میں ادائیگی کرنی ہیں اور ہم بھی متاثر ہورہے ہیں-تاجروں نے چیئر مین ایف بی آر سے مداخلت کی اپیل کی ہے جبکہ ایف بی آر ترجمان کے مطابق تاجروں کی جانب سے عائدکردہ الزامات بے بنیاد ہیں بیشتر تاجروں کو ادائیگی کردی گئی ہے جبکہ جن تاجروں کی ادائیگی روک دی گئی ہے وہ مرحلہ وار طور پر ہو رہی ہے جبکہ بعض کے ذمے ابھی بھی بقایا جات ہیں

متعلقہ عنوان :