اکپا کے زیر اہتمام نجی سکولوں میں زیر تعلیم بچوں کے والدین آج پشاور ہائیکورٹ کے سامنے پر امن احتجاج کریں گے

اتوار اپریل 23:21

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 اپریل2018ء) آل خیبر پختونخوا پیرنٹس ایسو سی ایشن (اکپا) کے زیر اہتمام نجی سکولوں میں زیر تعلیم بچوں کے والدین آج پشاور ہائی کورٹ کے سامنے نجی تعلیمی اداروں کی ہٹ دھرمی کے خلاف پر امن احتجاج کریں گے ،آل خیبر پختونخوا پیرنٹس ایسو سی ایشن (اکپا) کے راہنماوں نے نجی سکولوں میں زیر تعلیم بچوں کے والدین کو اس پر امن احتجاج میں شرکت کی دعوت دیتے ہوئے کہا کہ حکومت میں بیٹھے سکول مالکان کی ایماء پہر نجی سکول مافیا عوام کو لوٹ رہے ہیں ،یہ عوام کیلئے ایک مافیا بن چکا ہے جو بعض قوتوں کی ایما پر حکومت کی عملداری بھی نہیں مانتے بلکہ اعلیٰ عدلیہ کے احکامات ماننے سے بھی انکاری ہیں ، والدین نے احتجاج کا سلسلہ پورے صوبے تک بڑھانے کا اعلان کرتے ہوئے نیب سے نجی سکول مالکان کے اثاثہ جات کی تفصیلات طلب کرنے کا بھی مطالبہ کیا ہے ۔

(جاری ہے)

تفصیلات کے مطابق خیبر پختونخوا مین نجی تعلیمی اداروں کی جانب سے اپنے مطالبات کیلئی23اور 24اپریل کی ہڑتال کرنے کے خلاف آل خیبر پختون خوا پیرنٹس ایسو سی ایشن (اکپا) نے بھی آج پشاور ہائی کورٹ کے سامنے پر امن احتجاج کرنے کا اعلان کیا ہے جس میں ہزاروں کی تعداد میں وہ والدین شرکت کرینگے جن کے بچے نجی سکولوں میں پڑھتے ہیں ۔ اکپا کی جانب سے جاری ہونے والے پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ نجی سکولز اور کالجز نے غریبوں کا ستحصال شروع کیا ہے اور ایک مافیا بن گئی ہے جس کی سر پرستی صوبائی حکومت بیٹھے ہوئے بعض وزراء کر رہے ہیں جو عدالتی احکامات کو بھی خاطر میں نہیں لاتے اور بچوں سے زیا دہ فیس اور گرمیوں کی چھٹیوں کی فیس اب بھی لے رہے ہیں ۔

جاری ہونے والے بیان یہ بھی کہا گیا ہے کہ نجی تعلیمی اداروں کی جانب سے 23اور 24اپریل کو ہونے والی ہڑتال غیر قانونی اور غیر آئینی ہے اور یہ پشاور ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف ہے اور یہ توہین عدالت کی زمرے میں آتی ہے ۔ والدین کا کہنا ہے کہ نجی تعلیمی ادارے تعلیم کے بہانے کاروبار میں مصروف ہیں اور غریب اور متوسط طبقے کو لوٹ رہی ہے اب مزید انکے ظلم برداشت نہیں کرینگے ۔

اپنے بیان میں والدین نے مطالبہ کیا ہے کہ نجی تعلیمی اداروں کی کاروبار اور سرمایہ کاری سسٹم کے خلاف صوبائی حکومت اور وفاقی حکومت کاروائی کریں اور نیب نجی سکولز سسٹم کے خلاف تحقیقات کرکے انکے اثاثے قوم کے سامنے لائے جائے ۔ انہوں دھمکی دی اگر نجی تعلیمی اداروں نے غریب عوام کو لوٹنا بند نہ کیا اور عدالتی احکامات کو ماننے سے انکار کردیا تو صوبے کے تمام والدین احتجاج کے دائرے کو پورے صوبے تک بڑھائینگے ۔