عوام کوخاندانی غلامی میں نہ رکھا جائے ،ملک میں جمہوریت وآئین کی بالادستی ہونی چاہیے، لیاقت بلوچ

اتوار اپریل 23:21

گوادر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 اپریل2018ء) جماعت اسلامی وایم ایم اے کے مرکزی سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ بلوچستان اور گوادر پاکستان اورخطے کیلئے اہمیت کا حامل ہے پاکستانی عوام کوخاندانی غلامی میں نہ رکھا جائے ،ملک میں جمہوریت وآئین کی بالادستی ہونی چاہیے اور سب مقتدرقوتیں آئین وقانون کے پابند رہے اگر قانون نافذ کرنے والے ادارے خود آئین ہر عمل درآمد نہیں کریںگے توملک کیسے چلے گا۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے دورہ گوادر کے دوران جماعت اسلامی کے ورکرزکنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔کنونشن سے جماعت اسلامی کے صوبائی امیر مولانا عبدالحق ہاشمی ،صوبائی جنرل سیکرٹری ہدایت الرحمان بلوچ ،سعید احمد بلوچ ،مولانا لیاقت بلوچ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تعلیم صحت اور روزگار بلوچستان کا حق ہے ترقی پر سب سے پہلے حق بلوچستان کا ہے بلوچستان کو ترقی میں شامل نہ کرنا قبول نہیں نوجوانوں کی حق ملکیت تسلیم کیا جائے ،،بلوچستان کے نوجوانوں کو چین کے دورے نہ کروانا اور بڑے آفیسران کے دورے کرناردعمل پیدا کررہا ہے ،عدلیہ آج کل بہت زیادہ فعال ہے چیف جسٹس کا کہنا ہے کہ کوئی مائی کالال مارشلاء نہیں لگاسکتا ہم ان کی حمایت کرتے ہیں میڈیاوسوشل میڈیا کے دورمیں لوگوں کو گمراہ نہیں کیا جاسکتادہشت گردی کے پیچھے منبر ومحراب نہیں امریکہ ورلڈآرڈر،،مودی اور انڈیاہے پاکستان میں کوشش کی گئی کہ طاقت کے نام پر اقتدار چلے مگر مارشلاء نہیں چل سکتا پاکستان اور بلوچستان کو دیانتدار قیادت کی ضرورت ہے ۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ اہل بلوچستان کو سی پیک ثمرات سے مستفید کیا جائے،،چیف جسٹس کا چاروں صوبوں کے ہیڈکوارٹرزکا دورہ کرنا اس بات کا ثبوت ہے کہ عوام کو سہولیات فراہم کرنے میں حکمران ناکام ہوچکاہے ،نااہل حکومت ولوٹ مار کی وجہ سے عوام کا اعتماد ان حکمرانوں سے اُٹھ گیا ہے ،،جماعت اسلامی کوعوام کے مسائل کا تدارک ہے اور حل کر سکتی ہے عوام جماعت اسلامی کا ساتھ دیں تاکہ اسلامی پاکستان خوشحال بلوچستان کی راہ ہموار ہوجائیں۔

انہوں نے کہاکہ گوادر پوری دنیا کا معاشی حب بنے گا مگر اپنے باسیوں کو پانی تک میسر نہیں کیا جارہاگوادر کی بدحالی کی وجہ تیس سالوں سے گوادر پرمسلط حکمران طبقہ ہے گوادر کے شہریوں نے امیر ترین طبقہ کو ووٹ دیا ان لوگوں نے کبھی پانی بجلی وصحت کی سہولیات فراہم نہیں کی ۔۔بلوچستان وگوادر کے منتخب نمائندوں نے عوام کے مسائل حل کرنے کے بجائے اس میں اضافہ کر دیاہے حکمران طبقہ مالا مال جبکہ عوام صحت تعلیم وروزگار کیلئے پریشان ہیں ۔