2023 تک انڈس ہائی وے کو مکمل طور پر دو رویہ کر دیا جائے گا،

کراچی نادرن بائی پاس کو آئندہ سال کے ترقیاتی منصوبہ کا حصہ بنایا گیا،کوہاٹ ٹنل کو جاپانی کمپنی سے کشادہ کرایا جائے گا،مجلس قائمہ کو بریفنگ

منگل اپریل 17:20

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 اپریل2018ء) 2023 تک انڈس ہائی وے کو مکمل طور پر دورویہ کر دیا جائے گا۔ ڈیرہ غازی خان سے آگے چار رویہ سڑک کی تجویز ہے۔ ان خیالات کا اظہار این ایچ اے اور وزارت مواصلات کے افسران نے قومی اسمبلی کی مجلس قائمہ برائے مواصلات کے سامنے کیا۔ مجلس قائمہ کو بتایا گیا کہ کوہاٹ ٹنل کو جاپانی کمپنی نے پہلی بار تعمیر کیا تھا۔

لہذا خواہش ہے کہ سڑک کو کشادہ کرنے کے منصوبے کے لئے بھی اسی کمپنی کی خدمات لی جائیں تاکہ وہ ٹنل کے دوسرے حصے کو بھی تعمیر کرے۔ مجلس قائمہ نے استفسار کیا کہ مجلس قائمہ نے فروری میں پی ایس ڈی پی کی جو منظوری دی تھی اٴْس پر کتنا عمل درآمد ہوا۔ اس کے جواب میں این ایچ اے کے حکام نے بتایا کہ پی ایس ڈی پی حتمی منظوری کے لئے وزیراعظم کو پیش کیا گیا ہے اوراٴْمید ہے کہ ایک دو روز تک اس کی حتمی منظوری ہو جائے گی۔

(جاری ہے)

مجلس قائمہ کو یہ بھی بتایا گیا کہ کراچی کے نادرن بائی پاس کے منصوبے کو بھی آئندہ سال کے ترقیاتی پروگرام میں شامل کیا گیا ہے اور اس پر جلد کام شروع کر دیا جائے گا۔مجلس قائمہ کا اجلاس، صدر نشین عزت مآب محمد مزمل قریشی ، ایم این اے کی صدرات میں ہوا جس میں ممبران قومی اسمبلیجناب محمد اقبال شاہ، جناب سرزمین ، جناب محمد ریاض ملک، محترمہ مائزہ حمید، ڈاکٹر درشن، جناب نذیر احمد بگھیو، جناب سلیم رحمٰن، انجینئر حامد الحق خلیل، جناب سنجے پروانی ، مولانا قمر الدین، محترمہ نسیمہ حفیظ پانزئی اور انجینئر عثمان خان ترکئی نے شرکت کی۔ اس کے علاوہ سیکرٹری مواصلات ، چیئرمین ، نیشنل ہائی وے اتھارٹی اور دیگر اعلیٰ سول افسران نے شرکت کی۔