الخلیل، صہیونی حکام نے فلسطینی شہریوں کے 7 گھرغیر قانونی قرار دیدیئے، مسمار کرنے کا حکم

منگل اپریل 18:09

الخلیل (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 اپریل2018ء) قابض صہیونی حکام نے فلسطین کے مقبوضہ مغربی کنارے کے جنوبی شہر الخلیل میں فلسطینی شہریوں کے سات گھروں کو غیرقانونی قرار دے کر انہیں مسمار کرنے کا حکم دیا ہے۔اطلاعات کے مطابق اسرائیلی فوج نے سول انتظامیہ کے عہدیداروں کے ہمراہ الخلیل شہر میں سموع قصبے کی خربہ غوین کالونی پر چھاپہ مارا اور وہاں پر موجود سات مکانوں کے مالکان کو نوٹس دیئے کہ وہ مکان فوری طورپر خالی کریں تاکہ ان کی مسماری کا آپریشن کیا جاسکے۔

(جاری ہے)

نوٹس میں تنبیہ کی گئی ہے کہ اگرمکانات خالی نہیں کرائے گئے تو اس کے نتیجے میں مالکان کو مکان خود گرانا ہوں گے یا اسرائیلی حکام کو اس کا جرمانہ ادا کرنا ہوگا۔مقامی شہریوں کا کہنا ہے کہ صہیونی حکام کی طرف سے فلسطینی شہریوں کو 14 دن کی مہلت دی گئی ہے اور کہا گیا ہے کہ وہ چودہ روز کے اندر اندر مکان خالی کردیں۔مقامی شہریوں نے مکانات مسماری کے نوٹس پر گہرے غم وغصے کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ صہیونی ریاست قصد انتقامی کارروائی کے تحت گھروں کو مسمار کررہی ہے۔

متعلقہ عنوان :