ورکرز کنونشن میں ایم ایم اے کے سیاسی لائحہ عمل کے خدوخال پیش کئے جائیں گے، پیر اعجاز احمد ہاشمی

منگل اپریل 18:19

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 اپریل2018ء) جمعیت علما پاکستان کے مرکزی صدر اور متحدہ مجلس عمل کے نائب صدر پیر اعجاز احمد ہاشمی نے کہا ہے کہ 2 مئی کو ایم ایم اے کے اسلام آباد میں ہونے والے ورکرز کنونشن کے لئے تیاریاں شروع کردی گئی ہیں جس میں پانچوں رکن جماعتوں کے ملک بھر سے ضلعی عہدیداران شریک ہوں گے۔ جے یو پی کے عہدیداروں کو قومی ورکرز کنونشن میں بھر پور شرکت کی ہدایات جاری کردی گئی ہیں۔

2002ء سے بھی زیادہ اچھے نتائج ایم ایم ای2018ء کے الیکشن میں دکھائے گی جس کیلئے تمام رکن جماعتیں ہوم ورک مکمل کر چکی ہیں۔ انہوںنے کہا کہ متحدہ مجلس عمل قرآن اور نظام مصطفی کے نفاذکی جدوجہد کرے گی جو بانیان پاکستان کا مشن تھا لیکن سرمایہ داروں اور جاگیر داروں کے ذاتی مفادات کے باعث نافذ نہ ہو سکا۔

(جاری ہے)

جمہوری انداز سے آئین اور قانون کے مطابق جدوجہد ہر شہری کا حق ہے۔

ایم ایم اے اسلامی اقدارکے تحفظ اور نظام مصطفی کے نفاذ کیلئے عوام سے رابطہ کرنے کیلئے پرعزم ہے۔ ہماری پرامن جدوجہد ہمیشہ اسلامی تعلیمات کے فروغ کے لئے رہی ہے۔ اس وقت ضرورت اس امر کی ہے کہ دینی قوتوں کے ووٹ بینک کو یکجا کیا جائے جس کے لئے اکابرین کی ماضی میں کی جانے والی کوششوں کو آگے بڑھایا جا رہا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جے یو پی متحدہ مجلس عمل کے پلیٹ فارم سے مشترکہ سیاسی جدوجہد کو جاری رکھے گی۔

پیر اعجا ز ہاشمی نے کہا کہ 2 مئی کے کنونشن میں ایم ایم اے کے سیاسی لائحہ عمل کے خدوخال پیش کئے جائیں گے جس میں منشور اور عوامی جلسے شامل ہیں۔ ہمارے جلسے اتحاد بین المسلمین کا عملی اظہار ہوں گے۔ انہوںنے کہا کہ سیاست میں شائستگی اور آئین و قانون کی پاسداری اولین شرط ہے۔ سیاسی اختلافات پر بات کرتے وقت مخالفین کی عزت نفس کا خیال رکھا جانا چاہئے۔ لچر پن کوئی سیاست نہیں بلکہ سیاست کو گندہ کرنے کی سازش ہے۔