سینٹ قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کا اجلاس،ملکی اثاثہ جات رضاکارانہ ظاہر کرنے بارے بل 2018 منظور

منگل اپریل 22:43

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 اپریل2018ء) سینٹ قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کا اجلاس چیئرمین کمیٹی سینیٹر فاروق ایچ نائیک کی زیر صدارت پارلیمنٹ ہاؤس میں منعقد ہوا ۔ قائمہ کمیٹی کے اجلاس میں ملکی اثاثہ جات رضاکارانہ ظاہر کرنے کے بارے بل 2018،انکم ٹیکس ترمیمی بل 2018 اور غیر ملکی اثاثہ جات بارے بل 2018کے علاوہ تحفظ معاشی اصلاحات کے ترمیمی بل 2018کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔

چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ ایوان بالا کی قائمہ کمیٹی خزانہ کا پہلا اجلاس ہے تمام اراکین کیساتھ ملکر ملکی و قومی مفاد میں فیصلے کیے جائیں گے ۔ قائمہ کمیٹی نے ملکی اثاثہ جات رضاکارانہ ظاہر کرنے کے بارے بل 2018 کی تمام شقوں کا جائزہ لیتے ہوئے متعدد ترامیم کیساتھ بل منظور کرلیا۔وفاقی وزیر خزانہ رانا تنویر نے کہا کہ اس بل کو لانے کا مقصد ٹیکس نیٹ ورک کو بڑھانا ہے یہ ایک سکیم ہے ۔

(جاری ہے)

جو 30جون 2018تک ہے لوگ اس سے مستفید ہوسکتے ہیں ۔ممبرپالیسی ایف بی آر ڈاکٹر محمد اقبال نے قائمہ کمیٹی کو بل بارے تفصیلی بریفنگ دی ۔ قائمہ کمیٹی نے انکم ٹیکس ترمیمی بل 2018 کا جائزہ لیتے ہوئے ترامیم کیساتھ بل کی منظوری دے دی۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ حکومت کے موثر اقدامات کی بدولت 2ہزار ارب روپے کا زیادہ ٹیکس اکٹھا کیا ہے اور کوشش ہے کہ اس میں سے 80ارب کا عوام کوریلیف دیا جائے۔

رکن کمیٹی سینیٹر محمد اکرم نے کہا کہ بہت سے لوگ غیر قانونی کاروبار کے ذریعے اربوں روپے کماتے ہیں ۔ ایف بی آر ان کو ٹیکس کے دھارے میں لانے کے لیے موثر اقدامات اٹھائے۔ رکن کمیٹی اورنگزیب نے کہا کہ پشاور میں ایف آر کے حکام لوگوں کو غیر ضروری تنگ کرتے ہیں ۔۔میرا بیرون ملک کاروبار ہے ۔ 27کروڑ باہر سے لانے پر مجھے 9کروڑ کاٹیکس لگایا گیا ۔

میں ٹیکس فائلر ہوں مگر سسٹم نے مجھے نان فائلر ظاہر کیا ۔ مجھے 12لاکھ کا ٹیکس عائد کیا گیا اور کہا گیا کہ آپ کو ریفنڈ کیا جائے گا۔ مگر ریفنڈ نہیں کیا گیا۔ جو لوگ غلط ٹیکس لگاتے ہیں ان کے خلاف کارروائی کی جائے۔ قائمہ کمیٹی نے غیر ملکی اثاثہ جات ظاہر کرنے کے بل 2018کا بھی تفصیل سے جائزہ لیا اور ترامیم کیساتھ بل کی منظوری دے دی۔ قائمہ کمیٹی نے متفقہ طور پر تحفظ معاشی اصلاحات ترمیمی بل 2018کا تفصیلی جائزہ لیتے ہوئے بل کی منظوری دے دی۔

قائمہ کمیٹی کے آج کے اجلاس میںڈپٹی چیئرمین سینٹ سلیم مانڈوی والا سینیٹرز، عائشہ رضا فاروق ، مصدق مسعود ملک ، دلاور خان ، محمد اکرم ، خان زادہ خان،اورنگزیب خان، شبلی فراز اورمحسن عزیز کے علاوہ وزیر مملکت خزانہ رانا افضل ، چیئرمین ایف بی آر طارق پاشا ، ایڈیشنل سیکرٹری فنانس ظفر حسن ،ممبر پالیسی ایف بی آر ڈاکٹر محمد اقبال و دیگر حکام نے شرکت کی۔