پاکستان کو چیلینجز کا سامنا ہے، 2014 میں چھبیس ملین بچے سکول سے باہر تھے، بلیغ الرحمن

ک پانچ ملین بچے سکولوں میں بھرتی ہوئے ،گورنمنٹ جانے بعد ان اعدادو شمار میں مزید کمی آئے گی وفاقی وزیر تعلیم کا اسلام آباد میں بچوں کی سکول میں بھرتیوں کے حوالے سے تقریب میں خطاب

بدھ اپریل 20:26

پاکستان کو چیلینجز کا سامنا ہے، 2014 میں چھبیس ملین بچے سکول سے باہر تھے، ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 25 اپریل2018ء) وفاقی وزیر برائے تعلیم بلیغ الرحمن نے کہا ہے پاکستان کو بہت سارے چیلینجز کا سامنا ہے، 2014 میں چھبیس ملین بچے سکول سے باہر تھی 2017تک پانچ ملین بچے سکولوں میں بھرتی ہوئے گورنمنٹ کے جانے بعد ان اعدادو شمار میں مزید کمی آئے گی ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں بچوں کی سکول میں بھرتیوں کے حوالے سے تقریب میں خطاب کرتے ہوئے کیا ۔

(جاری ہے)

وفاقی وزیر تعلیم کا کہناتھا کہ بہت سے بچوں کو سکول جانے کا موقع نہ مل سکا انکے لیے ہم خصوصی لرننگ پروگرام لانچ کر رہے ہیںجب حالت نارمل نہیںتھے تو مسائل کا حل نکالنے میں ہم بہت حد تک کامیاب ر ہے وفاقی حکومت 18ہزار سکول چلا رہی ہے حکومت سکول کے بچوں کی کارکردگی نکھارنے میں بھی کلیدی کرداد ادا کر رہی ہے ہم سمجھتے ہیں جو بچے سکولوں سے باہر ہیں انکو ضرور سکولوں میں ہونا چاہئے سکولوں میں بچے بھرتی کرنے میں ہماری کاوشیںکافی حد تک کامیاب رہی سکول چھوڑنے والے بچوں کے اعدادوشمار پاکستان میں کوئی بہتر نہیں ہیںسکول چھوڑنے والے بچوں کی بہت ساری وجوہات ہیںمعیاری تعلیم اور سہولیات کا فقدان سکول ڈراپ آٹ بچوں کی بڑی وجہ ہے ،قطری حکومت کا شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے پاکستان میں تعلیم کے لئے کام کیاسکولوں میں سہولیات دینے کے ساتھ ساتھ ماحول اچھا کرنے کی بھی ضرورت ہے پاکستان میں پہلی بار ہم نے معیاری تعلیم کروائی ہم نے پاکستان میں معیاری تعلیم کے لئے کورس، استاتذہ، سہولیات سمیت سات پیمانے متعارف کروا ئے سکول سے باہر بچوں کی بڑی وجہ غربت بھی ہی

متعلقہ عنوان :