متحدہ عرب امارات، 8 ماہ کے بچے کو ’سفیر مسرت‘ کے عہدے پر تعینات کرنے پر وضاحت طلب

جمعرات اپریل 11:25

متحدہ عرب امارات، 8 ماہ کے بچے کو ’سفیر مسرت‘ کے عہدے پر تعینات کرنے ..
دبئی۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 اپریل2018ء) متحدہ عرب امارات کی جنرل ایوی ایشن اتھارٹی کی جانب سے 8 ماہ کے بچے کو ’سفیر مسرت‘ کے عہدے پر تعینات کرنے پر اماراتی پراسیکیوٹر نے وضاحت طلب کی ہے۔ذرائع کے مطابق ابو ظہبی پراسیکیوٹر جنرل نے جنرل ایو ایشن اتھارٹی کے حکام سے کہا ہے کہ وہ عدالت میں پیش ہو کر کم سن بچے کو ادارے میں ملازمت پر تعینات کرنے کی وضاحت کرے۔

(جاری ہے)

پراسیکیوٹر کی جانب سے انسٹا گرام پر پوسٹ کردہ ایک بیان میں بھی کہا ہے کہ اگرچہ ایک کم سن بچے کو ملازمت پر رکھنا محض تفریح اقدام ہے مگر پراسیکیوٹر کا اس واقعے کی حقیقت جاننا ضروری ہے۔خیال رہے کہ گذشتہ روز اماراتی اخبارات میں شائع ہونے والی خبروں میں بتایا گیا تھا کہ جنرل سول ایوی ایشن اتھارٹی نے 8 ماہ کے محمد الہاشمی نامی بچے کو ’سفیر مسرت‘ کے عہدے پر تعینات کیا ہے۔ اس اقدام کا مقصد ادارے میں گھٹن کی فضاء کم کرنا اور ماحول کو امید افزا اور پرمسرت بنانا ہے۔

متعلقہ عنوان :