پی ایس ڈی پی کے تحت وفاقی تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت ڈویژن کی 6 جاری، 9 نئی سکیموں کیلئے 4 ارب 33 کروڑ 65 لاکھ روپے مختص

جاری سکیموں کیلئے 2 ارب 84 کروڈ 35 لاکھ اور نئی سکیموں کیلئے ایک ارب 49 کروڈ 30 لاکھ روپے رکھے گئے ہیں این سی ایچ ڈی کے تعلیم کے لحاظ سے انسانی ترقی کے اعشاریوں میں بہتری کیلئے ایک ارب 50 کروڑ روپے مختص

جمعہ اپریل 18:24

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 اپریل2018ء) آئندہ مالی سال (2018-19ئ) کیلئے سرکاری شعبہ کے ترقیاتی پروگرام (پی ایس ڈی پی) کے تحت وفاقی تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت ڈویژن کی 6 جاری اور 9 نئی سکیموں کیلئے 4 ارب 33 کروڑ 65 لاکھ روپے مختص کئے گئے ہیں جس میں جاری سکیموں کیلئے 2 ارب 84 کروڈ 35 لاکھ اور نئی سکیموں کیلئے ایک ارب 49 کروڈ 30 لاکھ روپے شامل ہیں۔

پی ایس ڈی پی کے مطابق وفاقی تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت ڈویژن کی جاری سکیموں ایپام کے ایجوکیشن مینجرز کی استداد کار میں اضافے کے پروگرام کیلئے 2 کروڈ 61 لاکھ، ایپام کے ایجوکیشنل لیڈرشپ اینڈ انسٹیٹیوشنل مینجمنٹ پروگرام فیز iv کیلئے ایک کروڈ 57 لاکھ، ملک میں بنیادی تعلیم کے کمیونٹی سکولوں کے قیام اور چلانے کیلئے ایک ارب 20 کروڈ روپے مختص کئے گئے ہیں۔

(جاری ہے)

قومی نصاب کونسل کی نصاب شاخ کے سیکرٹریٹ کے قیام کیلئے 9 کروڈ 43 لاکھ، ٹمز میں شرکت کیلئی71 لاکھ اور این سی ایچ ڈی کے پاکستان میں تعلیم کے لحاظ سے انسانی ترقی کے عشاریوں میں بہتری کیلئے ایک ارب 50 کروڈ روپے مختص کیے گئے ہیں۔ پی ایس ڈی پی میں ڈویژن کی نئی سکیموں، ملک بھر میں 400 پیشہ ورانہ تربیت کے اداروں کے قیام کے لئے 60 کروڈ (50، 50 فیصد کے صوبے شراکت دار)، مدارس کو مرکزی دارے میں لانے کیلئے 10 کروڈ، نیشنل بیسٹ ٹیچر ایوارڈ کیلئے 5 کروڑ، نیشنل ٹیچر ٹریننگ انسٹیوٹ کیلئے 10 کروڑ، بلوچستان اور فاٹا کے طلبہ کو کیڈٹ کالجز، پولی ٹیکنیکل، پیشہ ورانہ اور ایجوکیشنل ونگ کے دیگر اداروں میں معیاری تعلیم فراہم کرنے کے لئے 10 کروڑ، ملک میں امتحانی نظام کو یکساں بنانے کیلئے 25 کروڑ، این سی اے لاہور کی ڈھانچہ جاتی سہولیات کو بہتر بنانے کیلئے 17 کروڑ 50 لاکھ، پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت پیشہ وارانہ سکولوں کیلئے 9 کروڑ 30 لاکھ اور پسرور میں خواتین کے پولی ٹیکنیکل انسٹیوٹ کیلئے 2 کروڑ 50 لاکھ روپے مختص کیے گئے ہیں۔