اپوزیشن جماعتوں کا وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کی جانب سے بجٹ پیش کئے جانے پر احتجاجاً قومی اسمبلی سے واک آئوٹ

جمعہ اپریل 21:19

اپوزیشن جماعتوں کا وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کی جانب سے بجٹ پیش کئے ..
اسلام آباد۔ 27اپریل(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 اپریل2018ء) اپوزیشن جماعتوں نے غیر منتخب وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کی جانب سے بجٹ پیش کئے جانے کے خلاف احتجاجاً قومی اسمبلی سے واک آئوٹ کیا۔ جمعہ کو قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید احمد شاہ نے نکتہ اعتراض پر کہا کہ خوشی کی بات ہے کہ حکومت اپنی مدت پوری کر رہی ہے تاہم یہ چھٹا بجٹ پیش کرکے نئی حکومت سے اس کا حق چھین رہی ہے۔

حکومت کی مدت 30 مئی کو مکمل ہو رہی ہے۔ حکومت اگر تین یا چار ماہ کا بجٹ پیش کرتی تو ہم اس کے ساتھ تعاون بھی کرتے۔ ہمیں اس کا حصہ نہیں بننا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ مفتاح اسماعیل کو وزیر بنا دیا گیا۔پہلی بار غیر منتخب شخص بجٹ پیش کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسی ممبر کے چلے جانے پر ہم خوش نہیں ہوتے ہم اس پارلیمنٹ کا تقدس اور بالادستی چاہتے ہیں۔

(جاری ہے)

مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان کی تاریخ میں ایسا نہیں ہوا۔ نئی روایات ڈالی جارہی ہیں۔ اس بجٹ کا جواز نہیں ہے۔ ایک ماہ کی مہمان حکومت سال کا بجٹ کیسے پیش کر سکتی ہے۔ آئین میں چار ماہ کا بجٹ پیش کرنے کی اجازت ہے۔ سرکاری شعبہ کے ترقیاتی پروگرام کی قومی اقتصادی کونسل سے توثیق ہی نہیں ہوئی۔ بجٹ پاس ہو جائے گا ہم اس عمل میں ساتھ دینا چاہتے ہیں تاہم غلط روایات ڈالنے سے گریز کیا جائے۔