کرپشن کرنیوالوں سے لوٹی دولت برآمد کرکے انہیں کڑی سزادی جائیں،مولانا عبدالحق ہاشمی

کرپشن کیسز بدعنوان عناصر کے چہرے قوم کے سامنے بے نقاب کرنے کی ضرورت ہے،امیر جماعت اسلامی بلوچستان

جمعہ اپریل 22:26

کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 27 اپریل2018ء) جماعت اسلامی کے صوبائی امیر مولاناعبدالحق ہاشمی نے کہا کہ کرپشن کرنے والوں سے لوٹی ہوئی دولت برآمد کرکے انہیں کڑی سزادی جائیں۔۔کرپشن کیسز بدعنوان عناصر کے چہرے قوم کے سامنے بے نقاب کرنے کی ضرورت ہے ۔سیاسی بنیادوں پر54ارب روپے قرضے لیکر معاف کرنے والوں سے قرضے وصول کرکے قوم کی حالت بدلنے پر خرچ کی جائیں ۔

بیرون ملک منتقل کرنے والی قومی دولت لانے کی ضرورت ہے کرپشن کرنے والوں کی صرف نااہلی ٹھیک نہیں قومی دولت برآمدکرنا اور انہیں عبرت ناک سزادیناضروری ہے ۔ ملک کو آئی ایم ایف ورلڈ بنک کے بھاری سودی قرضوں پر چلانا بھی کرپشن ہے سپریم کورٹ ملک کے نام پربین الاقوامی سودی مالیاتی اداروں سے قرضے اورکس مد میں خرچ کرنے کی تفصیلات بھی قوم کے سا منے لانے کیلئے اقدامات کریں ۔

(جاری ہے)

ملک کے نام پر قرضے بھی بیرون ملک ذاتی اکاونٹ میں منتقل ہوگیے ہوں گے ۔انہوں نے کہا کہ حکومت زراعت ،صنعت وتجارت پر توجہ دیں صنعتی یونٹس قائم کرکے عوام کو روزگارفراہم کریں بجلی کی فراہمی اور زرعی سطح پر پانی کی گرتی سطح کو بلند کرنے کیلئے ڈیمزبنانے پر توجہ دی جائیں ۔نئی صنعتیں قائم کریں ۔ کوئٹہ سمیت بلوچستان بھر میںموسم تبدیل ہونے کے ساتھ ہی لوڈشیڈنگ کے دورانیہ میں اضافہ ہوگیا ہے شہروں میں8سے 10اور دیہاتوں میں14سی18گھنٹے کی لوڈشیڈنگ نے عوام کی زندگی اجیرن بنادی ہے۔

2018میں لوڈشیڈنگ ختم کرنے کے حکومتی دعوے محض عوام کو بے وقوف بنانے کے لئے تھے جن کا پول کھل چکا ہے۔ بجلی کے بحران کی وجہ سے ملک کاصنعتی شعبہ زبوں حالی کاشکار ہے۔مزدورکسان اورزمیندارپریشان محنت کش نوجوان بے روزگاراوران کے گھروں میں فاقوں کی نوبت آن پہنچی ہے۔۔مہنگائی میں دن بدن ہوتے اضافے اور بے روزگاری نے لوگوں کو خود کشیاں کرنے پر مجبور کردیا ہے۔

موجودہ حکومت کے پانچ سال مکمل ہونے کو ہیں مگر عوامی مشکلات میں ذرابرابر بھی کمی نہیں ہوئی۔حکمرانوں کی غلط ترجیحات اور ناقص پالیسیوں کی وجہ سے لوگوں کی امیدیں دم توڑ چکی ہیں اور مایوسی کے اندھیرے چھانے لگے ہیں۔حکمرانوں کی ترجیحات سے ایسامحسوس ہوتا ہے کہ جیسے ان کو عوامی مسائل کے حل سے کوئی غرض نہیں۔ موجودہ حکمران عوام کو ریلیف فراہم کرنے میں بری طرح ناکام ہو چکے ہیں ۔اگر حکومت نے لوڈشیڈنگ ،بے روزگاری پر قابونہیں پایا تو عوام سڑکوں پر نکل آئیں گے۔حکومت لوڈشیڈنگ کے عذاب سے چھٹکارہ پانے کے لئے سنجیدگی دکھائے اور سستے ذرائع ہوا،،پانی اور قدرتی گیس سے بجلی پیداکی جائے۔