القاعدہ اوردیگر دہشت گرد گروپوں کے خلاف آپریشن جاری رہے گا،یمنی فوج

القاعدہ کے گڑھ پر سرکاری فوج کا کنٹرول، دہشت گردوں کے کئی ٹھکانے اورکنکریٹ کے بنکر تباہ کر دئیے گئے،بیان

ہفتہ اپریل 11:52

صنعائ(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 اپریل2018ء) یمن کی سیکیورٹی فورسز نے عرب اتحادی فوج کی مدد سے جنوب مشرقی گونری شبوہ کے عزان ڈئریکٹوریٹ سے القاعدہ کے جنگجوؤں کو نکال باہر کرتے ہوئے دہشت گردوں کے اہم مرکز پر قبضہ کر لیا ۔کارروائی میں دہشت گردوں کے کئی ٹھکانے تباہ حملوں کے لیے استعمال ہونے والے ان کے کنکریٹ کے بنکر تباہ کر دیے گئے عرب ٹی وی کے مطابق یمنی فوج نے گزشتہ روز جار ی کیے گئے اپنے ایک بیان میں کہاکہ یمن کی الشبوانیہ ایلیٹ فورس نے تین روز قبل عزان کے علاقے میں القاعدہ کے جنگجوؤں کے خلاف وسیع آپریشن شروع کیا۔

اس آپریشن میں مقامی مزاحمتی ملیشیا اور عرب اتحادی فوج کی معاونت بھی حاصل تھی۔دہشت گردوں کے خلاف جاری آپریشن میں شبوہ گورنری کے اہم علاقوں وادی رفض، الصعید ڈاریکٹوریٹ اور دیگر مقامات کو القاعدہ کے جنگجوؤں سے پاک کر لیا گیا ہے۔

(جاری ہے)

کارروائی دہشت گردوں کے کئی ٹھکانے تباہ حملوں کے لیے استعمال ہونے والے ان کے بنکر تباہ کر دیے گئے ۔

یمنی فوج کا کہنا تھا کہ القاعدہ اور دوسرے دہشت گردوں کے خلاف آپریشن جاری رکھا جائے گا۔ فوج کا کہنا تھا کہ سنگلاخ پہاڑوں، پیچیدہ اور خطرناک راستوں اور مخصوص جغرافیائی ماحول کی وجہ سے شبوہ گورنری میں الحوطہ اور الصعید کے بعد عزان سب سے مشکل مقام تھا۔شبوہ گورنری میں یمنی فوی کی یہ تازہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب حال ہی میں القاعدہ کے ایک مقامی کمانڈر ناصر حسین بامدوخ البوبکری العولقی کو مبینہ طور پر امریکی ڈرون طیارے کے ذریعے وادی رفض میں ہلاک کر دیا گیا تھا۔

متعلقہ عنوان :