سپریم کورٹ بار میں چیف جسٹس کی تصویر ، چیف جسٹس آبدیدہ ہو گئے

Sumaira Faqir Hussain سمیرا فقیرحسین ہفتہ اپریل 13:56

سپریم کورٹ بار میں چیف جسٹس کی تصویر ، چیف جسٹس آبدیدہ ہو گئے
لاہور (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 28 اپریل 2018ء) : لاہور ہائیکورٹ میں سپریم کورٹ بار سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ رات کو میں نے مینٹل اسپتال کی 40 کے قریب تصاویر دیکھیں ، میں غلط بیانی نہیں کر رہا لیکن میں ساری رات نہیں سو سکا۔ میں نے فوری طور پراسپتال کے دورے کا فیصلہ کیا۔سب سے پہلا کام یہ کیا کہ میں نے اعجاز گورائیہ سے کہا کہ کوئی انتظام کریں میں نے میٹنل اسپتال کا دورہ کرنا ہے۔

ان کا کیا قصور ہے جن لو اللہ کی طرف سے کوئی ذہنی بیماری ہو گئی ہے۔

(جاری ہے)

وہ بھی ہماری طرح کے انسان ہیں جو بیمار ہو گئے ہیں۔اور ہم ان کی دیکھ بھال ہی نہیں کررہے۔ ان کو اپنی ذات تک کا نہیں پتہ۔ مینٹل اسپتال میں مریضوں کو انجکشن لگا کر سُلا دیا جاتا ہے۔ تکلیف دیکھ کر مدد کرنے کو دل کرتا ہے۔ سسٹم میں خامیاں ہیں۔ کیا یہ حکومت کا کام نہیں جو مجھےکرنا پڑ رہا ہے؟ پہلی بار سپریم کورٹ بار میں کسی چیف جسٹس کی تصویر لگائی گئی ہے۔آج آپ سب کا پیار دیکھ کر میری آنکھوں میں آنسو آگئے ۔ ہاتھ جوڑ کر آپ سب کا مشکور ہوں۔ جن وکلا کو میں جھاڑ پلا دیتا ہوں وہ آج میرے لیے کھڑے ہیں۔ دعا کریں کہ اللہ مسائل کے حل کے لیے مجھے مہلت اور صحت دے۔