ایران سے متعلق جوہری معاہدہ کافی نہیں ہے، میرکل

ہفتہ اپریل 16:30

واشنگٹن (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 اپریل2018ء) جرمن چانسلر انجیلا میرکل نے کہا ہے کہ ایران کے جوہری پروگرام کے حوالے سے دستخط کیا گیا معاہدہ تہران کی خواہشات کو لگام دینے کے لیے کافی نہیں۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے وائٹ ہاس میں ملاقات کی ہے۔ اطلاعات کے مطابق وائٹ ہاس میں چانسلر میرکل کا خیر مقدم گرم جوشی سے کیا گیا تاہم یہ ابھی واضح نہیں کہ دونوں عالمی رہنماں کے درمیان کن اہم امور پر بات چیت ہوئی۔

ملاقات کے بعد ایران کے ساتھ جوہری ڈیل اور امریکا کی جانب سے اسٹیل اور ایلومینیم کی مصنوعات پر محصولات کے حوالے سے چانسلر میرکل اور صدر ٹرمپ کی جانب سے کسی قسم کے سمجھوتے کا کوئی اعلان نہیں کیا گیا۔ اگر یورپی یونین اور امریکا کے درمیان تجارتی تنازعے میں اضافہ ہوتا ہے تویکم مئی سے ان درآمدات پر محصولات میں پچیس فیصد اضافہ ہو جائے گا۔

(جاری ہے)

واشنگٹن میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں میرکل کا کہنا تھا کہ ہم ایرانی جوہری معاہدے کو ایک ابتدائی مرحلہ شمار کرتے ہیں جس نے خاص طور پر اس جانب ان کی سرگرمیوں کو سست کر ڈالا تاہم جرمنی کا نقطہ نظر یہ ہے کہ جوہری معاہدہ ایران کی خواہشات پر روک لگانے کی ضمانت کے لیے کافی نہیں ہی"۔ میرکل کے مطابق اس موضوع کے حوالے سے یورپ اور امریکا کے درمیان موافقت ہونی چاہیے۔

دوسری جانب ڈونلڈ ٹرمپ نے اعلان کیا ہے کہ ایران جوہری ہتھیار ہر گز حاصل نہیں کرے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ میں یہ بات نہیں کر رہا کہ آیا فوجی طاقت کا استعمال کیا جائے گا یا نہیں تاہم اتنا ضرور کہہ سکتا ہوں کہ وہ جوہری ہتھیار حاصل نہیں کر سکیں گے۔امریکی صدر نے ایرانی حکام کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ایرانی نظام پورے مشرق وسطی میں تشدد، خون ریزی اور انارکی پھیلا رہا ہے۔ ہمیں اس بات کو یقینی بنانا چاہیے کہ یہ قاتل نظام جوہری ہتھیار کے قریب بھی نہ پھٹکے اور ایران خطرناک میزائلوں کے پھیلانے اور دہشت گردی کے لیے اپنی سپورٹ کا سلسلہ ختم کرے۔