مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں اظہار تشویش ہیں‘برطانوی وزیر

اعظم مسئلہ کشمیر حل کرانے کے لیے مودی حکومت پر دباؤ ڈالیں‘ برطانوی ممبران پارلیمنٹ کا فیکٹ فائنڈنگ مشن مقبوضہ کشمیر بھیجا جائے مسلم لیگ (ن) کے راہنما وچیئرمین ترقیاتی کمیٹی کھلانا راجہ عاشق حسین خان کا بیان

ہفتہ اپریل 19:44

ہٹیاں بالا (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 اپریل2018ء) مسلم لیگ (ن) کے راہنما وچیئرمین ترقیاتی کمیٹی کھلانا راجہ عاشق حسین خان نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جانب سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں پر اظہار تشویش کرتے ہوئے کہا ہے کہ برطانوی وزیر اعظم مسئلہ کشمیر حل کرانے کے لیے مودی حکومت پر دباؤ ڈالیںبرطانوی ممبران پارلیمنٹ کا فیکٹ فائنڈنگ مشن مقبوضہ کشمیر بھیجا جائے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم نے بھارت کے دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہونے کے دعویٰ کی قلعی کھول کر رکھ دی ہے۔

انہوں نے کہاہیکہ کشمیرو پاکستان لازم و ملزوم ہیں اور دنیا کی کوئی بھی طاقت ان کو جد ا نہیں کر سکتی۔ کشمیریوں کا اہل پاکستان کے ساتھ لازوال رشتہ ہے اور کشمیری عوام کے دل پاکستانیوں کے ساتھ دھڑکتے ہیں مضبوط و مستحکم پاکستان مقبوضہ کشمیر کی بھارتی چنگل سے آزادی کا ضامن ہے۔

(جاری ہے)

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم پر عالمی خاموشی لمحہ فکریہ ہے۔

معصوم بچی آصفہ کے ساتھ زیادتی کے بعد قتل نے بھارت کا گھناؤنا چہرہ عالمی برادری کے سامنے بے نقاب کردیا ہے۔ بھارتی مظالم کشمیریوں کی تحریک آزادی کو ختم نہیں کرسکتے۔ انہوں نے مزید کہا ہیکہ آزاد کشمیر میں مسلم لیگ ن کی موجودہ حکومت وزیر اعظم راجہ محمد فاروق حیدر خان کی زیر قیادت مقبوضہ کشمیر کی بھارتی تسلط سے آزادی اور آزاد خطہ کی مثالی تعمیر وترقی اور عوامی فلاح وبہبود کے منصوبوں کی معیاری اور بروقت تکمیل کو یقینی بنانے کے لیے ہمہ وقت کوشاں ہے کہ وزیر اعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر خان کی زیر قیادت مسلم لیگ ن کی موجودہ حکومت خطہ کی تعمیر و ترقی عوامی مسائل کے حل، گڈ گورننس اور میرٹ کی بحالی کے لیے ہمہ وقت کوشاں ہے۔

خصوصاًتعلیم اور صحت کے شعبوں میں بہتری کے لیے وزیر اعظم آزادکشمیر اور انکی ٹیم کی کاوشیں لائق تحسین ہیں۔محکمہ تعلیم میں اصلاحات کے عمل سے جہاں آزاد کشمیر میں معیار تعلیم بہتر ہوگا وہاں تعلیم یافتہ طبقہ کو میرٹ کی بنیاد پر ملکی تعمیر وترقی کے عمل میں شرکت کے بھرپور مواقع ملیں گے آزاد کشمیر میں تعلیمی اداروں کی اپ گریڈیشن، سٹا ف کی کمی کو پورا کرنے کے علاوہ تعلیمی اداروں کی عمارات کی تعمیر وبحالی کے لیے خصوصی اقدامات کیے جارہے ہیں۔ تعلیمی اداروں میں اساتذہ اور سٹاف کی حاضری کو یقینی بنانے کے لیے بائیو میٹرک سسٹم متعارف کرانے کے علاوہ مقامی سطح پر عوامی نمائندوں اور زعماء کرام پر مشتمل کمیٹیاں بھی بنائی جائیں گی۔