وزیراعلیٰ پنجاب کے سابق پرنسپل سیکرٹری کی بیرون ملک تقرری کے خلاف از خود نوٹس کیس کی سماعت

چیف جسٹس پاکستان نے ڈاکٹر توقیر شاہ کو بیرون ملک جانے سے روک دیا ،تقرری میں توسیع کا نوٹیفکیشن بھی رو ک دیاگیا

ہفتہ اپریل 20:09

وزیراعلیٰ پنجاب کے سابق پرنسپل سیکرٹری کی بیرون ملک تقرری کے خلاف از ..
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 اپریل2018ء) چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں قائم 2 رکنی بنچ نے وزیراعلیٰ پنجاب کے سابق پرنسپل سیکرٹری کی بیرون ملک تقرری کے خلاف از خود نوٹس کیس میں ڈاکٹر توقیر شاہ کو بیرون ملک جانے سے روک دیا، عدالت نے وفاقی حکومت کو توقیر شاہ کی تقرری میں توسیع کا نوٹیفکیشن جاری کرنے سے بھی روک دیا۔

(جاری ہے)

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے قرار دیا کہ عدالت توقیر شاہ کی تقرری کا دوبارہ جائزہ لے گی، عدالتی حکم پر توقیر شاہ پیش ہوئے اور کہا کہ انہیں کوئی عدالتی نوٹس موصول نہیں ہوا میڈیا کی رپورٹ دیکھ کر عدالت میں پیش ہوا ہوں، مجھے عدالت کا مکمل احترام ہے، دوران سماعت فاضل چیف جسٹس نے توقیر شاہ کی کارکردگی رپورٹ دیکھنے سے انکار کردیا اور ریمارکس دیئے کہ ہمیں آپ کی کارکردگی سے کوئی دلچسپی نہیں عدالت نے دیکھنا ہے کہ آپ کی ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن میں کیسے تقرری ہوئی، سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ ڈویژن نے بتایا کہ وزیراعظم نے توقیر شاہ کی تقرری میں توسیع کی منظوری دی ہے جبکہ توقیر شاہ کا کہنا تھا کہ 8 مئی کو ڈبلیو ٹیو او ممبران ممالک کی کانفرنس ہے اور پاکستان اس میں کنوینر ہے بیرون ملک جانے سے متعلق پابندی پر نظر ثانی کی جائے عدالت نے توقیر شاہ کی استدعا مسترد کر دی، فاضل چیف جسٹس نے کہا کہ آپ کا سانحہ ماڈل ٹائون میں بھی نام تھا، جس پر توقیر شاہ نے کہا کہ وہ سانحہ ماڈل ٹائون کی ایف آئی آر میں نامزد نہیں ہیں، جس پر فاضل چیف جسٹس نے کہا کہ اس کا فیصلہ عدالت کرے گی اور آپ عدالت کی اجازت کے بغیر بیرون ملک نہیں جا سکتے۔