حکومت قادیانیوں کو آئین و قا نون کا پابند بنائے،ان کی اسلام و ملک دشمن منفی سر گرمیوں پر کڑی نگاہ رکھی جائے ،مولانا قا ری شبیر احمد عثمانی

ہفتہ اپریل 20:26

چنیوٹ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 اپریل2018ء) انٹر نیشنل ختم نبوت موومنٹ کے مرکزی نائب امیر مولانا قا ری شبیر احمد عثمانی نے کہا ہے کہ 26اپریل 1984کو جا ری ہو نے والے امتناع قادیانیت آرڈیننس پر سختی سے عمل در آمد کی ضرورت ہے جو کہ حکومت قا دیانیوں کو اس آرڈیننس کا پابند نہ بنا سکی اور قا دیانی کھلم کھلا آرڈیننس کی دھجیاں اڑارہے ہیں جو کہ حکومت کیلئے مسائل پیدا ہو سکتے ہیں اور حکومت کے کا نوں پر جوں تک نہیں رینگتی ، مرکز ختم نبوت جا معہ عثمانیہ ختم نبوت چناب نگر میں پریس کا نفرنس سے خطاب کرتے ہو ئے انہوں نے کہا کہ جنرل ضیاء الحق کے دور میں بنا یا گیا امتناع قادیانیت آرڈیننس جو کہ 26اپریل 1984کو بنا یا گیا جس کو آج 34سال بیت چکے ہیں لیکن قا دیا نی اپنے آپ کو غیر مسلم قلیت ماننے سے اور امتناع قا دیانیت آرڈیننس پر عمل کرنے سے انکا ری ہے حکومت کو چاہیے ہ وہ دوسری اقلیتوں کی طرح قا دیانی اقلیت کو بھی آئین و قانون کا پابند بنائے ،انہوں نے کہا کہ ہم سا لہا سال سے حکومت پاکستان سے یہ مطالبہ کرتے چلے آرہے ہیں حکومت قا دیانیوں کی اسلام و ملک دشمن و منفی سر گرمیوں کا نو ٹس لے کیونکہ ہم آئین و قانون کی بات کرتے ہیں اور آئین پاکستان 1974کے مطابق قا دیانی غیر مسلم اقلیت ہیں ان کا اسلام کے ساتھ کو ئی تعلق نہیں ،انہوں نے کہا 1984کے آرڈیننس کے تحت قا دیانی اپنے آپ کو مسلمان نہیں کہہ سکتے ،اسلامی شعائر استعمال نہیں کر سکتے ،اپنی عبادت گاہ کو مسجدکا درجہ نہیں دے سکتے ،اپنے مذہب کی تبلیغ نہیں کر سکتے ۔

(جاری ہے)

لیکن یہاں قادیانی سب کچھ کر رہے ہیں ان کی کھلی آزادی ہے قا دیانی اپنے آپ کو بیرونی دنیا میں مسلمان ظاہر کر کے سادہ لوح مسلمانوں کو گمراہ کرتے ہیں اور تبلیغ کرتے ہیں اسلای شعائر استعمال کر رہے ہیں لیکن حکومت نے آج تک ہما رے احتجاج کے بعد بھی نوٹس نہیں لیا ،انہو ں نے کہا کہ چناب نگر اس وقت بھی نو گو ایریا ہے یہاں پر بھی آپریشن ضرب آہن کی ضرورت ہے نیشنل ایکشن پلان کا اگلا فیز چناب نگر میں کیا جائے اور قا دیانیوں کے خلاف وسیع پیمانے پر آپریشن کیا جائے یہاں سے دہشت گرد اور ممنوعہ اسلحہ بھی ملنے کے امکانات ہیں اور دہشت گر دی کے خاتمہ کیلئے یہ آپریشن بہت مو ثر ثابت ہو سکتا ہے ،انہوں نے کہا کہ حکومت اگر قا دیا نیوں کو آئین و قانون کا پابند بنا لیتی تو شائد یہ حالات پیدا نہ ہو تے اور چناب نگر میں آئے روز کو ئی نہ کو ئی مسئلہ کھڑا ہو جا تا یہی وجہ ہے کہ قا دیانیوں کو کھلی آزادی ہے جیسے چاہیں کریں ،انہوں نے 26اپریل کے حوالے سے بتا یا کہ اس دن 1984کو جنرل ضیاء الحق نے اس آرڈیننس کو لا گو کیا قا دیانیوں کے کفر پر مہر ثبت کر دی لیکن آج 34سال گزر جانے کے بعد بھی حکومت اس پر عمل در آمد کرانے میں نا کام ہے ،انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ قادیانیوں کو جو کہ پاکستان کے 1974کے آئین کے مطابق غیر مسلم اقلیت ہیں ان کو آئین و قا نون کا پابند بنائے اور ان کی اسلام و ملک دشمن منفی سر گرمیوں پر کڑی نگاہ رکھی جائے ،اور چناب نگر میں حکومت اپنی رٹ قائم کرتے ہو ئے یہاں سے نو گو ایریاز ختم کئے جائیں اورچناب نگر میں مسلما نوں کو تحفظ فراہم کیا جائے ،نیشنل ایکشن پلان کا اگلا فیز چناب نگر میں شروع کیا جائے ۔