سعودی مقننہ میں سزائے موت کو عمر قید تبدیلی پر غور

ایک سال میں سعودی حکومت قوانین وضع کر کے سزائے موت کو ختم کر دیا جائیگا

ہفتہ اپریل 22:38

ریاض(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 28 اپریل2018ء) سعودی مقننہ سزائے موت کو عمر قید میں تبدیل کرنے پر غور کر رہی ہے،ایک سال میں سعودی حکومت قوانین وضع کر کے سزائے موت کو ختم کر دے گی۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق سعودی عرب میں سزائے موت پر عمل درامد روکنے اور اسے عمر قید میں تبدیل کرنے سے متعلق قوانین میں تبدیلی کو حتمی شکل دی جا رہی ہے۔

(جاری ہے)

اس بارے میں سعودی ولی عہد محمدبن سلمان کا کہنا ہے کہ سزائے موت کو عمر قید میں بدلنے کیلیے کام کر رہے ہیں۔

شہزادہ محمد بن سلمان کا مزید کہنا ہے کہ ایک سال میں سزائے موت کا خاتمہ کیا جاسکتا ہے۔انسانی حقوق کی تنظیم ہیومن رائٹس واچ کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ سعودی عرب میں2018ء میں اب تک 48 افراد کو سزائے موت دی گئی۔ہیومن رائٹس واچ نے بتایا ہے کہ سزائے موت پانے والوں میں سے نصف لوگوں کے منشیات میں ملوث ہونے پر سر قلم کیے گئے۔۔سعودی عرب میں منشیات کے جرم میں ملوث متعدد افراد تا حال موت کے منتظر ہیں۔