ایران کے ساتھ تجارتی معاہدہ مئی تک ہو نے کی توقع ہے، خواجہ حبیب الرحمان

اتوار اپریل 19:20

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 29 اپریل2018ء) پاک ایران فیڈریشن آف کلچر اینڈ ٹریڈ کے صدرخواجہ حبیب الرحمان نے کہاہے کہ ایران کے ساتھ تجارتی معاہدہ کیا جارہا ہے اور اس حوالے سے امید ہے کہ یہ تجارتی معاہدہ مئی تک ہوجائیگا جس کے بعد اس معاہدے کو جون میں باقاعدہ طور پر نافذ کر دیا جائیگا اس معاہدے کے تاجروں کو ایران سے آنے والی مختلف اشیاء پر ٹیکسوں میں رعایت دی جائیگی انہوں نے کہا کہ معاہدے کے بعد دونوں ممالک ایک دوسرے کی 80 فیصد اشیاء کی درآمدات و برآمدات کی ڈیوٹی میں رعایت دینے کے پابند ہو ں گی2021ء تک دو طرفہ تجارت کا حجم پانچ ارب ڈالر تک بڑھا نے کیلئے دونوں ممالک نے بینکاری کے شعبے میں خصوصی توجہ دینے پر بھی اتفاق کیا ہے جس کے تحت پا کستان اور ایران کے بڑے شہروں میں بینک کھولے جائیں گے ان خیالات کااظہار انہوں نے گزشتہ روز تاجروں کے نمائندہ ایک وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ پاکستان اور ایران کے درمیان آزاد تجارتی معاہدے کے باعث تاجروں کو ایران سے آنے والی 339 اشیاء پر ٹیکسوں میں رعایت دی جائیگی جبکہ تہران کی جانب سے پاکستان کی 309 اشیاء پر یہ رعایت منظور کی گئی ہے انہوں نے کہا کہ افغانستان سے کشیدہ تعلقات کی وجہ سے ترکمانستان تک پہنچنے کا راستہ بھی ایران ہے جسے پاکستان نظر انداز نہیں کرسکتا۔

(جاری ہے)

ا نہوں نے مزید کہا کہ صرف ڈیڑھ ارب ڈالر میں پاکستان ایران سے پانچ ہزار میگاواٹ بجلی خرید سکتا ہے جس سے پاکستان کی معیشت میں پیداواری انقلاب آجائے گا اور پیداوار میں اضافے کی وجہ سے حکومت ایک سال میں قیمت پوری کرلے گی جبکہ ایران سے آنے والی گیس سے بھی پاکستان خود سستی بجلی بنانے کے قابل ہو جائے گاخواجہ حبیب الرحمان نے مزیدکہا کہ پاکستانی چاول، آم، کینو، موسمی، سرجیکل آلات، کھیلوں کے سامان، کپاس، ٹیکسٹائل مصنوعات کے لئے ایران بہترین منڈی ہے جبکہ ترکی،، آذر بائیجان اور روس تک پہنچنے کی ایک گزرگاہ بھی ہے ۔