پانچ روز قبل بے رحمانہ طریقے سے قتل کی گئی 9 سالہ بچی صائمہ جروار کے قتل میں ملوث ملزمان کو پولیس گرفتار نہ کرسکی

ملزمان کی عدم گرفتاری کے خلاف مقتولہ بچی کے ورثا، جروار برادری، سول سوسائٹی، سیاسی، سماجی و مذہبی پارٹیوں کا جناح باغ چوک پر احتجاجی مظاہرہ اور دھرنا

اتوار اپریل 20:20

لاڑکانہ(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 29 اپریل2018ء) پانچ روز قبل بے رحمانہ طریقے سے قتل کی گئی 9 سالہ بچی صائمہ جروار کے قتل میں ملوث ملزمان کو پولیس گرفتار نہ کرسکی ہے۔ ملزمان کی عدم گرفتاری کے خلاف مقتولہ بچی کے ورثا، جروار برادری، سول سوسائٹی،، سیاسی، سماجی و مذہبی پارٹیوں کی جانب سے شہر کے جناح باغ چوک پر احتجاجی مظاہرہ کرکے دھرنا دیا گیا جس کے باعث ٹریفک کی آمد و رفت معطل ہوکر رہ گئی۔

اس موقع پر جروار برادری کے سردار علی جروار، سندھی ادبی سنگت ضلع لاڑکانہ کے رابطہ سیکریٹری ستار ہلیو، عزیز قاسمانی، رواداری تحریک کے وائس چئیمرنی دیدار میرانی، پنہل ساریو، پیپلز پارٹی شہید بھٹو کے ضلعی آرگنائیزر فقیر حبیب پتوجو، مختیار احمد بھٹو سمیت عوامی ورکرز پارٹی، پاکستان پیپلز پارٹی ورکرز، سندھ ترقی پسند پارٹی، پاکستان سنی تحریک، جعفریہ اسٹوڈنٹس آرگنائیزیشن اور دیگر تنظیموں کے رہنماؤں و کارکنان نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔

(جاری ہے)

اس موقع پر مظاہرین کا کہنا تھا کہ پانچ روز قبل تھانہ حیدری کی حد میں 9 سالہ معصوم بچی صائمہ جروار کو بے رحمانہ طریقے سے قتل کیا گیا جس کے منہ پر تشدد کے بھی نشانات تھے لیکن پانچ روز گذرنے کے باوجود لاڑکانہ پولیس قاتلوں کو گرفتار نہ کرسکی ہے جس کے باعث ورثا تاحال انصاف کے منتظر ہیں۔ مظاہرین نے چیف جسٹس آف پاکستان سمیت دیگر بالا حکام سے اپیل کی کہ واقعے کا نوٹس لے کر ملوث تمام ملزمان کو گرفتار کرکے کیفر کردار تک پہنچایا جائے بصورت دیگر احتجاج کا دائرہ وسیع کیا جائے گا۔