فیصل آباد ،ْ ایس ایچ او پر تشدد،

دہشتگردی کا مقدمہ درج ہونے پر وکلا کا احتجاج ،ْپولیس ہیڈ آفس کا گھیرائو کرلیا عملہ دفتر میں محصور ہوگیا ،ْوکلاء نے سیشن کورٹ میں داخل ہو کر سیکیورٹی پر مامور اہل کاروں کو بھی بھگادیا

پیر اپریل 14:53

فیصل آباد ،ْ ایس ایچ او پر تشدد،
فیصل آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 30 اپریل2018ء) ڈسٹرکٹ بار کے وکلاء نے ایس ایچ او پر تشدد کے بعد دہشت گردی کا مقدمہ درج کرنے کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے پولیس ہیڈ آفس کا گھیراؤ کرلیا۔میڈیا رپورٹ کے مطابق تین روز قبل عدالت میں ملزم کی پیشی کے دوران ڈسٹرکٹ بار کے وکلاء اور ایس ایچ او ڈجکوٹ ملک وارث کے درمیان تلخ کلامی ہوئی تھی اور مبینہ طور پر وکلاء نے ایس ایچ او کو تشدد کا نشانہ بنایا تھا جس پر پولیس نے 25 وکلاء کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج کیا جس کے بعد کچھ وکلاء کے گھروں پر چھاپے بھی مارے گئے۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق فیصل آباد ڈسٹرکٹ بار کے وکلاء نے دہشت گردی کے مقدمے کے اندراج اور گھروں پر چھاپے کے خلاف عدالتوں کا بائیکاٹ کیا اور پولیس کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔

(جاری ہے)

مشتعل وکلاء نے سی پی او آفس کا گھیراؤ کیا، گیٹ توڑنے کی کوشش کی اور دفتر پر پتھراؤ کیا جس کے باعث عملہ دفتر میں محصور ہوگیا، وکلاء نے سیشن کورٹ میں داخل ہو کر سیکیورٹی پر مامور اہل کاروں کو بھی بھگادیا۔ وکلاء نے ضلع کونسل چوک بھی ٹریفک کیلئے بلاک کردیا جس سے اطراف کے علاقوں میں ٹریفک جام ہوگئی۔چیف جسٹس نے واقعہ پر از خود نوٹس لینے اور سی پی او، آر پی او کو تبدیل کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔وکلاء کے مطابق جب تک ان کے مطالبات نہیں مانے جاتے وہ اپنا احتجاج جاری رکھیں گے۔