موسم گرما میں انار کی تتلی سلیلز، سفید مکھی، پھل کی مکھی ودیگر کیڑے انار کے پھل کو نقصان پہنچا سکتے ہیں، ماہرین

پیر اپریل 15:10

فیصل آباد۔30 اپریل(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 30 اپریل2018ء) ماہرین زراعت نے کہا ہے کہ موسم گرما کے آغاز کے باعث انار کے پودوں پر ضرررساں کیڑوں کا حملہ ہوسکتا ہے جس کے باعث انار کی تتلی سلیلز، سفید مکھی، پھل کی مکھی ودیگر کیڑے انار کے پھل کو نقصان پہنچا سکتے ہیں او ر سلیلز، سفید مکھی کی طرف سے پتوں سے رس چوسے جانے کے باعث فصل کمزور ہوسکتی ہے اور پھل زمین پر گر سکتا ہے اس لئے انار کے باغبان فوری طور پر ماہرین زراعت اور محکمہ زراعت کے فیلڈ سٹاف کی مشاورت سے تدارکی اقدامات یقینی بنائیں۔

انہوں نے بتایا کہ ضرر رساں کیڑے انار کے پودے پرحملہ آور ہو کر اپنے جسم سے فاسد مادے خارج کرتے ہیں جس سے پودے پر سیاہ اولی اگ آتی ہے اور ضیائی تالیف کا عمل بری طرح متاثر ہوتا ہے ۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ انار کی تتلی اور پھل کی مکھی انار کے پھل میں سوراخ کر کے اندر داخل ہوجاتی ہے اور اندر سے پیل کھا کر نقصان کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان مکھیوں کے بنائے گئے سوراخوں پر بیکٹیر یا اور فنگس حملہ آور ہوتے ہیں جس سے پھل گل سڑ جاتا ہے۔

انہوںنے کہا کہ اگر باغبانوں کو کوئی متاثرہ انار کا پھل نظر آئے تواسے فوری طور پر توڑ کر زمین میں گہرا دبا دینا چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ انار کے پودوں پرحملہ کی صورت میںکاربوسلفان 20 ای سی بحساب 2.5 ملی لیٹر فی لیٹر پانی میں ملا کر سپرے کرنے سے ضرررساں کیڑ وں سے بچاؤ ممکن ہے ۔ا نہوں نے کہا کہ اس سلسلہ میں مزید معلومات فری ایگری کلچرل ہیلپ لائن سے بھی حاصل کی جاسکتی ہیں۔

متعلقہ عنوان :