حکومت کا قومی سطح پرملٹی ڈرگ ریزسٹینس ٹائیفائیڈ کے لئے ویکسین منگوانے کا فیصلہ

اس ویکسین کوجلد حفاظتی ٹیکوں کے قومی پروگرام میں ٹائیفائیڈ سے بچائو کی خوراک شامل کرلی جائے گی

پیر اپریل 15:50

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 30 اپریل2018ء) حکومت پاکستان نے قومی سطح پرملٹی ڈرگ ریزسٹینس ٹائیفائیڈ کے لئے ویکسین منگوانے کا اصولی فیصلہ کرلیا ہے۔بل اینڈ مالینڈاگیٹس فائونڈیشن کے حکام سے ملاقات میں طے ہوا ہے کہ ٹائیفائیڈ کی ویکسین کے بارے میں سروے کرنے میں مدد دی جائے گی اورجلد حفاظتی ٹیکوں کے قومی پروگرام میں ٹائیفائیڈ سے بچائو کی خوراک شامل کرلی جائے گی۔

کراچی،حیدرآباد سمیت سندھ ،خیبر پنختونخواہ میں ملٹی ڈرگ ریزسسٹینس ٹایئفائیڈ کے کیسز میں بتدریج اضافے کے پیشِ نظر اور بچوں کی زندگیوں کو بچانے کے لیے آغا خان اسپتال ،،پاکستان پیڈیاٹیرک ایسوسی ایشن اور حکومت پاکستان نے باقاعدہ پہلی بارملٹی ڈرگ ریزسسٹینس ٹایئفایئڈ کے لئے قومی سطح پرعالمی ادارہ صحت کی منظورشدہ ویکسین منگوانے کا اصولی فیصلہ کرلیا ہے۔

(جاری ہے)

ایم ڈی آر یا ایس ڈی آر ٹایئفایڈ میں بچے پر مخصوص ادویات اثرانداز نہیں ہوتی۔ پاکستان پیڈیاٹیرک ایسوسی ایشن کے رکن ڈاکٹر ایم این لعل نے بتایاکہ نئی ویکسین چھ ماہ کے عمر میں لگائی جاسکے گی۔سیکریٹری صحت حکومت سندھ ڈاکٹر فضل اللہ پیچو نے بتایاکہ حکومتی سطح پر ویکسین کے لئے پہلے سروے کیا جائے گا، جس کے بعد مطلوبہ مقدار کے حساب سے گاوی گلوبل الائینس سے ویکسین کی درخواست کی جائے گی۔

آغا خان اسپتال کی جانب سے تحقیق کے مطابق سب سے پہلے سندھ کے ضلع حیدرآباد میں ایم ڈی آر ٹایئفائیڈ کے کیسز سامنے آئے تھے جس کی بنیادی وجہ صاف پانی میں آلودہ پانی کی آمیزش تھی۔ دوسری جانب وفاقی حکومت نے اس ویکسین کو حفاظتی ٹیکوں کے قومی پروگرام میں بھی شامل کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔