ایوانِ صنعت و تجارت سکھر کی جانب سے بجٹ پاکستان کی اقتصادی پیشرفت اور کاروبار کے فروغ کیلئے حوصلہ افزاء قرار

منگل مئی 00:10

سکھر۔30اپریل(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 01 مئی2018ء) ایوانِ صنعت و تجارت سکھر کے صدر انجینئرعبدالفتاح شیخ نے بجٹ 2018-19 کو پاکستان کی اقتصادی پیشرفت اور کاروبار کے فروغ کیلئے حوصلہ افزاء قرار دیا ۔آئل ریفائنریز کے قیام کیلئے اعلان کردہ رعایتی پالیسی اور نئے آبی منصوبوں اور سستی بجلی کے حصول کیلئے فنڈز مختص کئے جانا جبکہ بزرگ ریٹائرڈ ملازمین کو اضافی پینشن جیسے اقدامات عام افراد کی معاشی حالت کیلئے اہم ہیں۔

جبکہ کارپوریٹ ٹیکس انکم ٹیکس فائلرز کیلئے رئیل اسٹیٹ میں سرمایہ کاری پر ٹیکس ، بینک ترسیلات پر ودہولڈنگ ٹیکس کے علاوہ سُپر ٹیکس میں کمی کے اعلان سے سرمایے کی گردش میں مثبت اضافہ ہوگا۔ علاوہ ازیں حصص مارکیٹ میں بونس شیئرز پر ٹیکس کے خاتمے سے اور ڈیوڈنڈ پر ٹیکس کم ہونے سے حصص مارکیٹس پر مثبت اثرات مرتب ہونگے۔

(جاری ہے)

پاکستان کی مجموعی اقتصادیات صنعت ، زراعت اور تجارت کو دی گئی سہولتوں سے مزید فروغ پائیں گی کہ متعدد سیکٹرز کیلئے ٹیکس ڈھانچے میں تبدیلیاں ان تمام سیکٹرز کیلئے مثبت ہیں جس سے مجموعی پیداوار میں اضافہ ہوگا۔

صدرِ ایوان نے مزید کہا کہ بجٹ میں رکھے گئے اہداف پانے کیلئے روزِ اول سے کارکردگی جانچی جائے اور کسی بھی مرحلے پر قرضوں میں تخمینہ لگائی گئی حد سے تجاوز نہ کیا جائے ، درآمدات و برآمدات میں ظاہر کردہ خلیج میں کمی کیلئے بین الاقوامی نئی منڈیوں کی تلاش جاری رکھی جانی چاہیے جبکہ درآمدات پر نظر ثانی کی جائے اور انہیں ہر ممکن حد تک محدود کیا جائے ۔ اقتصادیات میں خواہشات اور حقائق کے مابین توازن برقرار رکھا جانا نہایت ضروری ہے اور دانشمندانہ دور رس اقدامات سے ہم اس اُمید افزاء بجٹ کے اہداف پاتے ہوئے پاکستان کی مجموعی اقتصادی صورتحال مزید بہتر بنانے میں کامیاب ہوسکے ہیں۔

متعلقہ عنوان :