ایم کیو ایم 33 برس ٹارگٹ کلنگو بھتہ خوری کا حصہ رہی، خورشید شاہ

متحدہ قتل عام کرکے لوگوں کے گھر برباد کرتی رہی،بہتر ہے اب عزت سے بیٹھ جائیں کچھ لوگ صرف گالی گلوچ کی سیاست کررہے ہیں جن کا کوئی نظریہ ہے نہ پروگرام پیپلزپارٹی نے میثاق جمہوریت کے ذریعے ملکی سیاست و پارلیمنٹ کو نیا تصور دیا لیکن نواز شریف نے ہمارے خلاف سازشیں کیں،اپوزیشن لیڈر کی میڈیا سے گفتگو

منگل مئی 21:29

ایم کیو ایم 33 برس ٹارگٹ کلنگو بھتہ خوری کا حصہ رہی، خورشید شاہ
سکھر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 01 مئی2018ء) قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید احمد شاہ نے ایم کیو ایم(((پاکستان)) کے رہنما خالد مقبول صدیقی کی پریس کانفرنس پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ ایم کیو ایم33برس ٹارگٹ کلنگ،، بھتہ خوری کا حصہ رہی اورقتل عام کرکے لوگوں کے گھر برباد کرتی رہی،بہتر ہے اب عزت سے بیٹھ جائیں،کچھ لوگ صرف گالی گلوچ کی سیاست کررہے ہیں جبکہ پیپلزپارٹی نیمیثاق جمہوریت کے ذریعے ملک کی سیاست اور پارلیمنٹ کو نیا تصور دیا لیکن اسکے باوجود نواز شریف نے ہمارے خلاف سازشیں کیں۔

سکھر میں ایک تقریب میں شرکت کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے خورشید شاہ نے ایک مرتبہ پھر ایم کیو ایم کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہیکہ 33 سال تک حکومتوں کا حصہ رہنے کے باوجود وہ کراچی میں ایک یونیورسٹی تک نہیں بنا سکی ہے۔

(جاری ہے)

ان کا کہنا تھا کہ اپنے 33 برس میں ایم کیو ایم ٹارگٹ کلنگ اور بھتہ خوری کا حصہ رہی ہے اور انھوں نے قتل عام کیا اور لوگوں کے گھر برباد کیے، لوگوں کو سوائے لاشوں کے کچھ نہیں دیا اس لیے اب اس کے لوگ عزت سے بیٹھ جائیں کیونکہ ان کا چہرہ لوگوں نے دیکھ لیا ہے۔

ایم کیو ایم پاکستان کی اندورونی چپقلش کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ خالد مقبول صدیقی کے لیے کچھ نہیں کہوں گا کیونکہ وہ مایوس ہے اور فاروق ستار سے بھی جان نہیں چھڑا سکے ہیں۔۔خورشید شاہ نے کہا کہ کراچی میں جتنی ڈولپمنٹ ہوئی ہے وہ ہم کروا رہے ہیں یا پھر نعمت اللہ خان نے کرائی تھی۔ان کا کہنا تھا کہ ہماری سیاست میں ایسے لوگ آگئے ہیں جن کا نہ کوئی نظریہ ہے اور نہ پروگرام اس لیے وہ سوائے گالیوں کے کچھ نہیں دیتے کیونکہ انھوں نے صرف گالم گلوچ کی سیاست، سیکھی لیکن اب قوم کو اس سیاست کو مسترد کرنا ہوگا۔

انھوں ںے کہا کہ کہ میثاق جمہوریت کے ذریعے ملک کی سیاست اور پارلیمنٹ کو نیا رخ اور تصور دیا لیکن اس کے باوجود نواز شریف نے ہمارے خلاف سازشیں کیں جس سے اب وہ خود تسلیم کرتے ہیں۔۔خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ ملک پر قرضے بڑھ گئے ہیں لیکن یہاں میٹرو بنائی جارہی ہیں، پاکستان میں ایک ایسی ٹیم بننی چاہیے جو جائزہ لے کہ کس نے زیادہ ترقیاتی کام کرائے ہیں۔

بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے حوالے سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ رائے ونڈ میں تو لوڈ شیڈنگ ختم ہوگئی ہے لیکن سکھر، رحیم یار خان اور ڈیرہ غازی خان سمیت ملک کے دیگر شہروں میں لوڈ شیڈنگ بدستور جاری ہے اور لوگ عذاب میں مبتلا ہیں۔انھوں نے میڈیا سے گفتگو کے دوران حکومت کی آئینی مدت کے خاتمے کے بعد نگراں سیٹ اپ کے حوالے سے کہا کہ نگراں وزیراعظم کا نام فی الحال نہیں بتاسکتا۔