پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ صنعتی شعبہ پراضافی بوجھ ہے ‘شہباز اسلم

ٹرانسپورٹیشن اخراجات بڑھنے سے اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ سے مہنگائی بڑھے گی،اضافہ واپس لیا جائے ‘عدنان بٹ پٹرولیم لیوی ٹیکس اور سیلز ٹیکس کا خاتمہ کرکے پٹرول کی قیمتوں میں کمی کرکے ریلیف دیا جائے‘فیروز پور روڈ انڈسٹریل اسٹیٹس

بدھ مئی 14:01

پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ صنعتی شعبہ پراضافی بوجھ ہے ‘شہباز اسلم
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 02 مئی2018ء) تاجر رہنما و ممبر لاہور چیمبرز آف کامرس وانڈسٹری سابق وائس چیئرمین فرایا شہباز اسلم نے پٹرولیم مصنوعا ت میں اضافہ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے انڈسٹری پر بوجھ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ کے بعد صنعتی شعبہ کے ٹرانسپورٹیشن اخراجات بڑھیں گے جس کا لازمی اثر اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ کی صورت میں نکلے گا جس سے مہنگائی میں ہوشربا اضافہ ہوگا ، اس لیے حالیہ اضافہ فی الفور واپس لیا جائے ۔

ان خیالات کا اظہار انہوںنے فائونڈ ر چیئرمین عدنان بٹ،ارشد بیگ،تنویر احمد،حقیق احمد،شاہد بیگ اور دیگر صنعتکاروں کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ شہباز اسلم نے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ سے حکومت کو وقتی طور پر تو ریونیو حاصل ہوجائے گا لیکن اس کے مستقبل میں منفی اثرات مرتب ہونگے ۔

(جاری ہے)

پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ سے انڈسٹری کی پیداواری لاگت بڑھے گی اور اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ ہوگا اور مہنگی اشیاء کے باعث بیرون ملک پاکستانی مصنوعات کی مانگ میں کمی کے باعث ملکی برآمدات میں جو پہلے ہی تنزلی کا شکار ہیں مزید کمی سے حکومت کے زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی کے ساتھ ساتھ تجارتی خسارہ میں اضافہ ہوگا۔

انہوںنے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات پر پٹرولیم لیوی ٹیکس اور سیلز ٹیکس کا خاتمہ کرکے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کی جائے تاکہ ہوشربا مہنگائی میں عوام کو ریلیف حاصل ہو۔