چیف سیکرٹری گلگت بلتستان کاسپیشل ایجوکیشن کمپلیکس کی افتتاحی تقریب سے خطاب

بدھ مئی 14:22

گلگت۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 02 مئی2018ء) چیف سیکریٹری گلگت بلتستان ڈاکٹر کاظم نیاز نے کہاہے کہ ایک زمانے میں گلگت بلتستان کو مردہ منصوبوں کا قبرستان کہا جاتا تھا مگر اب ایسا نہیں ہے تمام مردہ سکیموں کو زندہ کرنے کیلئے اپنا حصہ ضرور ڈالا ہے اور مردہ سکیموں میں سے اکثر پر کام مکمل ہو چکا ہے اور بہت ساری سکیموں پر کام جاری ہے، سپیشل ایجوکیشن کمپلیکس کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ جو لوگ جسمانی طورپر معذور ہیں انہیں معذور کہنا درست نہیں ہے ،معذور وہ لوگ ہیں جن کی آنکھوں میں خواب سجے ہوئے نہیں ہیں ہم معذور ہیں کیونکہ ہم نے ان بچوں کو وہ مواقع فراہم نہیں کئے جن کے یہ لوگ حقدار ہیں، ہماری سوچ معذور ہے اس لئے ہم ان لوگوں کو معذور سمجھتے ہیں ،جنہیں سہولیات دینے کیلئے ہمیں مواقع دیئے ہیں ہمیں اپنی سوچ میں تبدیلی لانے کی ضرورت ہیں جب تک ہم اپنی سوچ میں تبدیلی نہیں لائیں گے تب تک ہم معاشرے میں باوقار زندگی نہیں گزار سکتے ۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ ہم نے سپیشل ایجوکیشن کمپلیکس کو بحال کر کے خصوصی بچوں پر کوئی احسان نہیں کیا، ان کا حق تھا انہیں وہ حق مل گیا ہے یہ شروعات ہیں منزل نہیں منزل پانے کیلئے آگے بہت کام کرنے کی ضرورت ۔انہوں نے کہاکہ کنٹریکٹ ملازمین کو مستقل کرنے کیلئے قانون میں طریقہ کار موجود ہے کسی کو میں اپنی طرف سے مستقل نہیں کرسکتا ۔

متعلقہ عنوان :