نیب لاہور نے بڑی کارروائی کرتے ہوئے صاف پانی کرپشن کیس میں ملوث اہم ملزم ڈپٹی سیکرٹری ہائوسنگ کو گرفتار کر لیا

دیگر چار ملزمان کی جانب سے اہم شواہد حاصل ہونے پر خالد ندیم بخاری کی گرفتاری عمل میں آئی ،احتساب عدالت نے جسمانی ریمانڈ دیدیا

بدھ مئی 15:50

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 02 مئی2018ء) قومی احتساب بیورو ( نیب )) لاہور نے کارروائی کرتے ہوئے صاف پانی کرپشن کیس میں ملوث اہم ملزم ڈپٹی سیکرٹری ہائوسنگ کو گرفتار کر لیا ،ملزم خالد ندیم بخاری کو احتساب عدالت میں پیش کر کے جسمانی ریمانڈ حاصل کر لیا گیا ۔ ترجمان نیب لاہور کے مطابق ملزم ڈپٹی سیکرٹری ہائوسنگ خالد ندیم بخاری کروڑوں روپے کی کرپشن میں معاونت کے الزام میں گرفتار کیا گیا ، ملزم کی شریک ملزمان سے ملی بھگت سے بہاولپور میں 116 فلٹریشن پلانٹس انتہائی مہنگے داموں لگائے گئے،ملزمان کی جانب سے بہاولپور کے اس منصوبہ میں حکومتی خزانے کو کروڑوں روپے کا نقصان پہنچایا گیا۔

ترجمان کے مطابق ملزم خالد ندیم کی دھوکہ دہی کے ذریعے ٹینڈر میں اصل قیمت سے 40 فیصد زیادہ رقوم کے بل پاس کروائے گئے، ملزم نے بہاولپور ریجن میں صاف پانی کمپنی منصوبہ کے تحت مبینہ طور پر مہنگے داموں 116 فلٹریشن پلانٹس لگائے،اس منصوبے پر صوبائی حکومت کی جانب سے کروڑوں روپے خرچ کیے گئے جو کرپشن کی نظر ہوئے،فلٹریشن پلانٹس کی تنصیبی کے حوالے سے تمام منصوبہ بندی میں مبینہ طور پرجعلی کاغذات کا سہارا لیا گیا۔

(جاری ہے)

ترجمان کے مطابق نیب لاہور کی جانب سے 17اپریل کو 4 دیگر مرکزی ملزمان کی گرفتاری عمل میں لائی گئی ،چاروں ملزمان سے دوران تفتیش ملزم ڈپٹی سیکرٹری خالد ندیم کیخلاف اہم شواہد حاصل ہوئے۔ملزم خالد ندیم بخاری کو احتساب عدالت کے روبرو پیش کر کے جسمانی ریمانڈ حاصل کر لیا گیا ہے ۔