جمعیت علماء اسلام کے ضلعی سیکرٹریٹ میں تحصیل مجلس عاملہ ضلعی مجلس عاملہ اور ضلعی مجلس شوری کا مشترکہ اجلاس

لورالائی کے الیکشن سیل کے حوالے سے تفصیلی رپورٹ پیش کی گئی ایم ایم اے کا اجلاس تمام طاغوتی قوتوں اسلام دشمن قوتوں اور قوم پرستوں کیلئے ایک پیغام ثابت ہوگا اور پاکستان خصوصا بلوچستان کی سیاست میں ایک سنگ میل ثابت ہوگا، شرکاء

بدھ مئی 19:32

لورالائی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 02 مئی2018ء) جمعیت علماء اسلام کے ضلعی سیکرٹریٹ میں تحصیل بوری تحصیل میختر کے تحصیل مجلس عاملہ ضلعی مجلس عاملہ اور ضلعی مجلس شوری کے مشترکہ اجلاس زیر صدارت قائمقام امیر مولوی عبدالرحمن منعقد ہو ا اور مہمان خصوصی جمعیت علما ء اسلام کے صوبائی نائب امیر اور صوبائی امیر ایم ایم اے مولوی نور اللہ تھے اجلاس میں ضلعی ڈپٹی جنرل سیکرٹری مولوی محمد رسول مخلص نے ضلع لورالائی کے الیکشن سیل کے حوالے سے تفصیلی رپورٹ پیش کی مشترکہ اجلاس سے ایم ایم اے کے صوبائی امیر مولوی نوراللہ جمعیت علماء اسلام کے صوبائی نائب امیر مولوی انوار الدین، صوبائی ناظم عبدالواحد صدیقی ،صوبائی ڈپٹی ناظم مفتی غلام حید ر، قائمقام امیر مولو ی عبدالرحمن ناصر، ضلعی جنرل سیکرٹری عطااللہ کاکڑ، ضلعی سیکرٹری اطلاعات قاری سنزر خان رحیمی اور حاجی محمد خان کبزئی نے خطا ب کرتے ہوئے کہا کہ 12مئی کے منگوچر میں ایم ایم اے کا اجلاس تمام طاغوتی قوتوں اسلام دشمن قوتوں اور قوم پرستوں کیلئے ایک پیغام ثابت ہوگا اور پاکستان خصوصا بلوچستان کی سیاست میں ایک سنگ میل ثابت ہوگا اور جمعیت علماء اسلام اور ایم ایم اے دینا بھر کے مسلمانوں مدارس مساجد اور دیندار طبقات کی ضرورت بن چکی ہے اور اگرہم نے اپنے نظریات قائد ین اور اسلاف کے نقش قدم پر نہ چلے اوران کے دیئے گئے سابق اور راستے پر نہ چلے تو ہمارا نام و نشان مٹ جائے گا انہوں نے کہا کہ ہم صرف اور صرف علما ء دیو بند کے نظریات اور ان کے نقش و قدم پر چلتے ہوئے ہی کامیابی حاصل کرسکتے ہیں کیونکہ علماء حق انبیاء کے وارث ہیں اس موقع پر جمعیت علماء اسلام کے صوبائی نائب امیر و صوبائی امیر ایم ایم اے مولانا نور اللہ نے لورالائی کے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ایم ایم اے کی تشکیل میں اور کابینہ میں اختلافات نہیں ہیں یہ محض سیا سی مخالفین اور دشمن کی پھیلائی ہوئی بے بنیاد افواہیں ہیں ایم ایم اے کی مرکزی کابینہ سپریم کونسل ہے تمام ترفیصلے باہمی مشاورت اور ملک اورقوم اور اسلامی تقدس کو برقرار رکھنے اور دین و مذہب کے وسیع ترمفاد میں کیے جاتے ہیں اور اسی طرح بہت جلد ضلعی سطح پر بھی ایم ایم اے کی تشکیل کردی جائیگی ا مرکزی سپریم کونسل میں آئیندہ الیکشن 2018ء کیلئے تمام صوبوں کی تجاویز پر مرکزی سپریم کونسل امیدواروں کا فیصلہ کرینگے انہوں نے کہا کہ 12مئی کا منگوچر میں ایم ایم اے کا جلسہ انتخابی مہم کا جلسہ بھی ثابت ہوگا اور تمام تر مخالفین اسلام دشمن عناصر اور ملک اور قوم کو مختلف بے بنیا د نعروں پر تقسیم کرنے والوں کیلئے ایک اہم پیغام بھی ثابت ہوگا انہوں نے کہا کہا جمعیت علما اسلام میں کوئی گروہ بندی نہیں ہے البتہ رائے کا اختلاف ایک جمہوری حق ہے جمعیت علماء اسلام اور ایم ایم اے کو عوامی طاقت حاصل ہے جس سے دینا کی کوئی طاقت ٹکرا نہیں سکتی اورنہ ہی مقابلہ کرسکتی ہے انہوں نے کہا کہ اگر ابھی بھی ہم نے ہوش کے ناخن نہ لیے اور ہوش مندی سے فیصلہ نہ کیا اور ملک میں دین دشمن اسلام دشمن عناصر سیکولر قوتوں کا مقابلہ نہ کیا توہمارے حالات بھی شام و عراق کشمیر سے بدتر ہوسکتے ہیں جہاں پر ہزاروں مساجد مدارس کو بند کردیا گیا ہے اور اذن پر پابندی لگادی گئی ہے ۔