اسلام آباد ہائی کورٹ کا علی جہانگیر صدیقی کی امریکا میں بطور سفیر تعینات کرنے کے خلاف درخواست پر فریقین سے تحریری جواب طلب ، کیس کی مزید سماعت 16 مئی تک ملتوی

بدھ مئی 21:49

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 02 مئی2018ء) اسلام آباد ہائی کورٹ نے معروف کاروباری شخصیت علی جہانگیر صدیقی کو امریکا میں پاکستانی سفیر تعینات کرنے کے خلاف دائر درخواست پر فریقین سے تحریری جواب طلب کرتے ہوئے سماعت 16 مئی تک ملتوی کردی۔ جمعرات کو عدالت عالیہ جسٹس اطہر من اللہ پر مشتمل سنگل بینج نے شہزاد صدیق علوی کی جانب سے دائر درخواست پر سماعت کی۔

اس موقع پر وفاق کی جانب سے اٹارنی جنرل آف پاکستان اشتر اوصاف عدالت میں پیش ہوئے جبکہ علی جہانگیر صدیقی کے وکیل وسیم سجاد نے جواب داخل کرنے کے لیے مزید وقت طلب کیا۔ اٹارنی جنرل اشتر اوصاف نے عدالت کو بتایاکہ امریکہ میں سفیر تعیناتی کا معاملہ جوں کا توں ہے، اگر کوئی پیش رفت ہو ئی تو عدالت کو آگا ہ کریںگے۔

(جاری ہے)

عدالت نے استفسار کیا کہ کیا تعیناتی کے لئے سمری کو ریکارڈ کا حصہ بنا گیا ہے جس پر اشتر اوصاف نے بتایاکہ یہ حساس معاملہ ہے اس کیس کی سماعت کو اوپن کورٹ میں نہ کریں۔

عدالت نے حکم دیا کہ یہ عوامی مفاد کا معاملہ ہے۔ اٹارنی جنرل اشتر اوصاف نے تحریری جواب دینے کے لئے مزید وقت طلب کر لیا۔ عدالت نے حکم دیا کہ دس دن کا وقت دیتے ہیں۔ وفاق اور عدالت کی جانب سے مقرر کردہ عدالتی معاونین تحریری جواب عدالت میں جمع کرائیں۔ اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایاکہ وزیر اعظم کو نوٹس جاری نہیں کیا جا سکتا۔ اٹارنی جنرل نے عدالت سے استدعا کی کہ علی جہانگیر صدیقی کی تعیناتی کی سمری کو پبلک نہ کیا جائے،سمری کو ریکارڈ کا حصہ نہیں بنایا۔ عدالت نے علی جہانگیر صدیقی کی تعیناتی سے متعلق تمام ریکارڈ اور سمری پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت 16 مئی تک ملتوی کردی۔