آمدہ موسم برسات کے دوران کیکر کی کاشت سے شاندار فوائد حاصل کئے جاسکتے ہیں،محکمہ زراعت

جمعرات مئی 14:19

فیصل آباد۔3 مئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 03 مئی2018ء) آمدہ موسم برسات کے دوران کیکر کی بوائی مثبت اثرات کی حامل ہوگی اور ایک پائو بیج کی درست انداز میں کاشت سے کیکر کے ایک ہزار پودوں کو پروان چڑھایا جا سکتا ہے تاہم اس کیلئے لازم ہے کہ بوائی سے 48گھنٹے قبل کیکر کے بیج کو ٹھنڈے پانی میں ڈبو کر رکھ دیا جائے یا گرم پانی میں ڈال کر پانی کو آہستہ آہستہ ٹھنڈا ہونے دیا جائے تاکہ مذکورہ بیج بوائی کے بعد بھر پور فصل دینے کے قابل ہو سکے۔

محکمہ زراعت کے ترجمان نے بتایاکہ کیکر یا ببول پنجاب کے میدانی علاقوں میں کاشت کیا جانے والا سدا بہار درخت ہے جو خشک اور بنجر زمینوں میں نارمل موسمی حالات کے دوران خود بخود بھی اگ آتا ہے یا اسے باضابطہ اگایا بھی جا سکتا ہے ۔

(جاری ہے)

انہوںنے بتا یا کہ یہ درخت موسمی حالات کے خلاف بہت زیادہ قوت مدافعت کا حامل ہوتا ہے لہٰذا شدید گرمی ، پانی کی زیادتی اس کی نشو و نما پر اثر انداز نہیں ہو سکتی۔

انہوںنے کہا کہ کیکر کی خاصیت یہ بھی ہے کہ یہ نہ صرف سیم ، تھور ، کلر زدہ زمین پر اگ سکتا ہے بلکہ زمین کی اصلاح بھی کرتا ہے۔ انہوںنے کہا کہ قدرتی صلاحیت کیکر کو زیر زمین نمکین پانی کے باوجود بھی نقصان نہیں پہنچنے دیتی بلکہ اسے زرعی فصلات کے ساتھ بھی کاشت کیا جا سکتا ہے۔ انہوںنے بتا یا کہ موسم برسات کے دوران کیکر فالتو پانی کو جذب کر کے زمین میں پانی کے توازن کو بر قرار رکھنے میں بھی بھر پور معاون ثابت ہوا ہے۔