الیکشن کمیشن نے انتخابی حلقہ بندیوں پر دائر اعتراضات نمٹانے کے بعد قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی حلقہ بندیوں کی تفصیلات جاری کر دی

جمعرات مئی 23:40

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 03 مئی2018ء) الیکشن کمیشن نے انتخابی حلقہ بندیوں پر دائر اعتراضات نمٹانے کے بعد قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی حلقہ بندیوں کی تفصیلات جاری کر دی ہیں۔ ضلع چترال قومی اسمبلی کا حلقہ نمبر 1 ہوگا، سوات کے 3، دیر بالا 2، لوئر دیر 1، مالاکنڈ، بونیر، شانگلہ کے اضلاع کی ایک ایک نشست ہوگی۔ کوہستان، بٹگرام کی ایک ایک، مانسہرہ اور تورغر کی 2، ایبٹ آباد کی 2، ہری پور 1، صوابی 2، مردان 3، چارسدہ 2، نوشہرہ 2، پشاور 5، کوہاٹ، ہنگو، کرک، بنوں،، لکی مروت، ٹانک کے اضلاع کی ایک ایک نشست ہوگی، ڈیرہ اسماعیل خان کی 2 نشستیں ہونگی۔

اس طرح خیبرپختونخوا سے قومی اسمبلی کی براہ راست نشستوں کی تعداد 39 ہوگی۔ قبائلی علاقوں کی 12 نشستیں ہوں گی۔

(جاری ہے)

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی 3 نشستیں این اے 52، 53 اور 54 ہوں گی۔ اٹک کی 2، راولپنڈی کی 7، چکوال 2، جہلم 2، گجرات 4، سیالکوٹ 5، نارووال2، گوجرانوالہ 6، منڈی بہائو الدین2، حافظ آباد 1، سرگودھا 5، خوشاب 6، میانوالی 2، بھکر 2، چنیوٹ 2، فیصل آباد 10، ٹوبہ ٹیک سنگھ 3، جھنگ 3، ننکانہ صاحب 2، شیخوپورہ 4، لاہور 14، قصور 4، اوکاڑہ 4، پاکپتن 2، ساہیوال 3، خانیوال 4، ملتان 6، لودھراں 2، وہاڑی 4، بہاولنگر 4، بہاولپور 5، رحیم یار خان 6، مظفر گڑھ 6، لیہ 2 ، ڈیرہ غازی خان 4، راجن پور 3 حلقوں پر مشتمل ہوگا۔

پنجاب سے براہ راست نشستوں کی تعداد 141 ہوگی۔ صوبہ سندھ میں جیکب آباد، کشمور کی ایک ایک، لاڑکانہ 2، شکارپور 2، قمبر شہداد کوٹ2 ، گھوٹکی 2، سکھر 2، خیر پور 3، نوشہرو فیروز 2، شہید بینظیر آباد2، سانگھڑ 3، میرپور خاص 2، عمر کوٹ 1، تھرپارکر 2، مٹیاری 1، ٹنڈو اللہ یار 1، حیدر آباد 3، ٹنڈو محمد خان 1، بدین 2، سجاول 1، ٹھٹھہ 1، جامشورو 1، دادو 2، کراچی 21 نشستیں ہوں گی۔

بلوچستان میں قلعہ سیف اللہ، ژوب اور شیرانی کے اضلاع پر مشتمل ایک حلقہ ہوگا۔ لورالائی، موسیٰ خیل، زیارت، دکی اور ہرنائی کے اضلاع پر مشتمل ایک نشست ہوگی، ڈیرہ بگٹی، کوہلو، بارکھان، سبی، لہڑی پر مشتمل ایک حلقہ ہوگا، نصیر آباد، کھچی اور جھل مگسی پر مشتمل ایک حلقہ ہوگا، جعفر آباد اور صحبت پور کے اضلاع پر مشتمل ایک حلقہ،، ضلع پشین اور ضلع قلعہ عبداللہ کا ایک ایک حلقہ،، کوئٹہ 3، مستونگ، شہید سکندر آباد اور قلات کا ایک حلقہ،، چاغی، نوشکئی اور خاران کا ایک، خضدار کا ایک، پنجگور، واشک، آواران کا ایک، کیچ کا ایک، ضلع لسبیلہ و گوادر کا حلقہ قومی اسمبلی کا آخری حلقہ ہوگا جو این اے 272 ہوگا۔

صوبہ سندھ کے صوبائی حلقوں کی تعداد 130 ہوگی جن پر براہ راست انتخابات ہوں گے۔ بلوچستان اسمبلی کے حلقوں کی کل تعداد 51، خیبرپختونخوا 99 جبکہ پنجاب اسمبلی کے کل حلقوں کی تعداد 297 ہوگی، جن پر براہ راست انتخاب ہوگا۔