وانگام میں پر امن مظاہرین پر بھارتی فورسز کی طرف سے طاقت کا وحشیانہ استعمال سرکاری دہشت گردی ہے، میر واعظ فورم

شہید کشمیری طالب علم کو خراج عقیدت

جمعہ مئی 11:20

سرینگر ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 04 مئی2018ء) مقبوضہ کشمیر میں میر واعظ عمر فاروق کی سرپرستی میں قائم حریت فورم نے وانگام شوپیاں میں پر امن مظاہرین پر بھارتی فورسز کی طرف سے گولیوں اور پیلٹ گنوں کے بے دریغ استعمال جس کے نتیجے میں ایک نوجوان جاں بحق اور درجنوں شدید زخمی ہوگئے ہیںکی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے بدترین سرکاری ریاستی دہشت گردی قرار دیا ہے۔

کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق فورم کے ترجمان نے سرینگر میںجاری ایک بیان میں کہاکہ بھارتی فورسز خود کالے قوانین کے تحت حاصل خصوصی اختیارات کے تحت نہتے کشمیریوں کو وحشیانہ ظلم و تشدد کا نشانہ بنا رہی ہیں۔انہوںنے کہاکہ وانگام شوپیاں جیسے خونین واقعات اب روز کا معمول بنتے جارہے ہیںاور کشمیریوںنوجوانوں کو ظلم و تشدد اورطاقت کے بل دیوار کے ساتھ لگانے کا عمل جاری ہے ۔

(جاری ہے)

تاہم انہوںنے واضح کیاکہ کہ اس طرح کے غیر جمہوری اور غیر انسانی ہتھکنڈوں سے کشمیری آزادی پسند قیادت اور عوام کے عزم کو شکست نہیں دی جاسکتی۔انہوںنے شوپیاںمیں شہید ہونیوالے کشمیری طالب علم عمراحمد کمارکو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ کشمیری بھارتی تسلط سے آزادی کے حصول کیلئے اپنی جانوںکا نذرانہ پیش کر رہے ہیں او ر ان کی قربانیوں کو رائیگاں نہیں جانے دیا جائے گا۔

انہوں نے حریت رہنماء مختار احمد وازہ کی گرفتاری کی بھی شدید مذمت کی۔ اس دوران حریت فورم کے چیئرمین میرواعظ عمر فاروق کی ہدایت پر ایک وفد نے سرینگر کے صدر اسپتال جاکر وانگام شوپیاں میں بھارتی فورسز کی اندھادھند فائرنگ سے شدید زخمی ہونے والے افراد کی عیادت کی ۔ وفد میں غلام نبی زکی، مشتاق احمد صوفی، فاروق احمد سوداگر، محمد صدیق ہزار اور ساحل احمد وار شامل تھے ۔