محکمہ سماجی بہبود ترقی نسواں 100 کے لگ بھگ مر د و خواتین ملازمین کا مستقل نہ کیے جانے کے خلاف احتجاج مظاہرہ

ایک ہفتہ کی ڈیڈلائن کے بعد تادم مرگ بھوک ہڑتال کا اعلان

جمعہ مئی 18:09

مظفرآباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 04 مئی2018ء) محکمہ سماجی بہبود ترقی نسواں 100 کے لگ بھگ مر د و خواتین ملازمین نے مستقل نہ کیے جانے کے خلاف احتجاج مظاہروں کا آغاز کرتے ہوئے ایک ہفتہ کی ڈیڈلائن کے بعد تادم مرگ بھوک ہڑتال کا اعلان کر دیا اس ضمن میں گزشتہ روز کنٹریکٹ ملازمین نے اپنے جائز حقوق کے لیے احتجاجی مظاہرہ کیا جس میں بڑی تعداد میں مرد و خواتین ملازمین نے شرکت کی انہوں نے بازوں پر سیاہ پٹیاں باندھ رکھی تھی اور ہاتھوں میں پلے کارڈ اور کتبے اٹھاکر ان پر اپنے حقوق اور محکمہ کی بے حسی اور غفلت سے متعلق نعرے درج تھے خواتین کا یہ بھی موقف تھا کہ ہم نے دور دراز دشوار گزار پہاری علاقوں میں جاکر اپنے فرائض سر انجام دیے محکمہ اور حکومت کی نیک نامی کے لیے دن رات ایک کیا لیکن ہمیں جھوٹے وعدوں پر ٹراخانے کی پالیسی اختیار کر کے ہمارا معاشی قتل کیا جارہا ہے ،تفصیلات کے مطابق محکمہ سماجی بہود و ترقی نسواں نی2008میں دیہات کی غریب خواتین کو ہنر مند بنانے کے لیے ترقیاتی سکیم دور دراز دیہاتوں میں شروع کروائی اخباری اشتہار کی روشنی میں ٹیسٹ انٹرویوں کے زریعے امیدوران کی تقرریاں عمل میں لائیں گی ،ترقیاتی سکیم کے خلاف 2012میں تعینات ملازمین کی انتھک محنت اور جانفشانی سے جن میں اکثریت خواتین کی ہے نے ترقیاتی سکیم کے مادی اہداف حاصل کیے جس کی روشنی میں متذکرہ بالاترقیاتی سکیم کی تمام آسامیوں کو نارمل میزانیہ پر منتقل کردیا گیا ،31جنوری 2017کو سیکرٹری سماجی بہبود و ترقی نسواں نے وزیر اعظم کے نام سمری ارسال کی جس میں تحریر کیا گیا کہ جملہ ملازمین کی تقرریاں تمام قواعد و ضوابط پورا کرتے ہوئے اخبار میں اشتہار دے کر ٹیسٹ انٹرویو کے بعد میرٹ پر آنے والے امیدوران کی تقرری کی گئی،کمیٹی اعلیٰ آفیسران پر مشتمل تھی لیکن متذکرہ سمری سے ایمپلائمنٹ اینڈ ویمن ڈویلمنٹ سنٹرز سے متعلقہ 98ملازمین کو شامل نہیں کیا گیا ،بالا حقائق کی روشنی میں ترقیاتی سکیم ایمپلائمنٹ اینڈ ویمن دویلمنٹ سینٹر کے جملہ ملازمین محکمہ کی آسامیوں کو اخبارات میں دوبارہ مشتہر کرنے کے لیے عدالت العالیہ کے فیصلہ کی روشنی میں بعجلت میں کاروائی کررہا ہے جبکہ اسی نوعیت کی دیگر ترقیاتی اسکیم ہا کے کنٹریکٹ ملازمین کو کہیں آرڈنینس کے تحت اور کہیں اپنی پسند کو مدنظر رکھتے ہو ئے مستقل کرنے کی کاروائی کررہا ہے ،مظاہرین نے وزیر اعظم آزاد کشمیر سے اپیل کی ہے کہ سماجی بہبود و ترقی نسواں میں تعینات جملہ کنٹریکٹ ملازمین کے ساتھ ایک جیسا سلوک برتاؤ کرنے کی احکامات جاری کیے جائیں تاکہ کے محکمہ کے ملازمین مرد و خواتین میں پائے جانے والی بے چینی دور ہو سکے ،

متعلقہ عنوان :