مقدمات میں تاخیر پر عدلیہ اور بار برابر کے ذمہ دار ہیں ، میاں ثاقب نثار

انصاف کی فوری فراہمی عدلیہ کی بنیادی ذمہ داری ہے، بطور عدلیہ سربراہ عدالتی نظام کو ازسرنو مرتب کرنے کے لیے پرعزم ہوں، قانونی تنازعات کے حل کے لیینمتعلقہ اداروں کو تعاون کرنا ہوگا،نمعاشی استحکام کے لیے بھی تمام اداروں کو مربوط انداز میں کام کرنا ہوگا،چیف جسٹس آف پاکستان معاشی استحکام کے لیے بھی تمام اداروں کو مربوط انداز میں کام کرنا ہوگا جب کہ منی لانڈرنگ اور سائبر کرائم جیسے مقدمات کے حل کے لیے جدید عدالتی نظام ناگزیر ہے،سپریم کورٹ میں منعقدہ آٹھویں جوڈیشل کانفرنس سے خطاب

جمعہ مئی 23:52

مقدمات میں تاخیر پر عدلیہ اور بار برابر کے ذمہ دار ہیں ، میاں ثاقب نثار
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 04 مئی2018ء) چیف جسٹس پاکستان میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ مقدمات میں تاخیر پر عدلیہ اور بار برابر کے ذمہ دار ہیں کیوں کہ انصاف کی فوری فراہمی عدلیہ کی بنیادی ذمہ داری ہے، بطور عدلیہ سربراہ عدالتی نظام کو ازسرنو مرتب کرنے کے لیے پرعزم ہوں، قانونی تنازعات کے حل کے لیینمتعلقہ اداروں کو تعاون کرنا ہوگا،نمعاشی استحکام کے لیے بھی تمام اداروں کو مربوط انداز میں کام کرنا ہوگا، جمعہ کے روز سپریم کورٹ میں منعقدہ آٹھویں جوڈیشل کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ کانفرنس کا مقصد مقدمات میں تاخیر اور زیر التوائ مقدمات ہیں، مقدمات میں تاخیر پر عدلیہ اور بار برابر کے ذمہ دار ہیں کیوں کہ انصاف کی فوری فراہمی عدلیہ کی بنیادی ذمہ داری ہوتی ہے جب کہ تاخیر کا مسئلہ بار اور بنچ کے باہمی تعاون سے حل ہوگا، بطور عدلیہ سربراہ عدالتی نظام کو ازسرنو مرتب کرنے کے لیے پرعزم ہوں، قانونی تنازعات کے حل کے لیینمتعلقہ اداروں کو تعاون کرنا ہوگا،نمعاشی استحکام کے لیے بھی تمام اداروں کو مربوط انداز میں کام کرنا ہوگا جب کہ منی لانڈرنگ اور سائبر کرائم جیسے مقدمات کے حل کے لیے جدید عدالتی نظام ناگزیر ہے چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ غیر معیاری قانونی تعلیم اور جوڈیشل افسران کی تربیت نہ ہونا بھی فوری انصاف کے راستے میں رکاوٹ ہے جب کہ نظام انصاف قوم کی ترقی میں اہم کردار ادا کرتا ہے اور تیز تر نظام انصاف کے ذریعے ہی ایسا ممکن ہے، یہ یقینی بنانا ہے کہ مناسب قانونی معلومات شہریوں کے لیے دستیاب ہو جب کہ متبادل نظام انصاف کے لیینمؤثر لائحہ عمل بنانا ہے، چیف جسٹس نے کہا کہ کانفرنس کا مقصد سی پیک کے راستے میں بظاہر نظر نہ آنے والے مسائل پر بات کرنا ہے اوراس نکانفرنس سے سی پیک کے راستے میں آنے والی رکاوٹوں کو دور کرنے میں مدد ملے گی۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہنپہلی مرتبہ قانونی فورم سے بیرونی سرمایہ کاری کے موضوع کا انتخاب کیا گیا، کانفرنس بیرونی سرمایہ کاری کے راستے میں حائل متوقع رکاوٹوں کے تدارک کے لیے ہے اور کانفرنس بیرونی سرمایہ کاری سے حاصل فوائد عام آدمی تک پہنچانے کے لیے ہے، چیف جسٹس نے کہا کہ سی پیک پاکستان اور چین کے درمیان سماجی و اقتصادی ترقی کا بڑامنصوبہ ہے، سی پیک سے بھرپوراستفادے کے لیے معاون عوامل کو مدنظررکھنا ہوگا، سی پیک سے ملک میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری بڑھے گی غیرملکی سرمایہ کاری سے متعلق آئینی معاملات کو بھی مدنظررکھنا ہوگا، جسٹس ثاقب نثار نے مزید کہا کہنسی پیک کی صورت میں پاکستان معاشی سنگ میل عبور کرنے کے قریب ہے، بطور قوم سی پیک کے ذریعے آنے والی سرمایہ کاری زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانا ہے جب کہ عدلیہ ملک کی معاشی ترقی میں اپنا حصہ ڈالنے کے لیے کوشاں ہیں۔