پرکاش راج کو مودی کیخلاف آواز اٹھانا مہنگا پڑگیا

جب سے مودی اور حکمران جماعت کیخلاف آواز اٹھائی، تب سے بالی وڈ نے کام دینا بند کردیا ہے ،ْ میڈیا سے گفتگو

ہفتہ مئی 12:48

ممبئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 05 مئی2018ء) بھارتی ادا کارہ پرکاش راج کو مودی کیخلاف آواز اٹھانا مہنگا پڑگیا۔میڈیا رپورٹ کے مطابق بھارتی اداکار پرکاش راج نے دعویٰ کیا کہ جب سے انہوں نے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی اور حکمران جماعت بی جے پی کے خلاف آواز اٹھائی، تب سے بالی وڈ نے کام دینا بند کردیا ہے۔ نیشنل ایوارڈ یافتہ اداکار کا کہنا ہے کہ گزشتہ سال اکتوبر میں بھارتی صحافی گوری لنکیش کے قتل پر نریندر مودی کی خاموشی پر بی جے پی کے خلاف آواز اٹھائی تو بولی وڈ نے مجھے سائیڈ لائن کردیا۔

(جاری ہے)

راج پرکاش نے کرناٹکا کے انتخابات میں بی جے پی کی قیادت کے خلاف مہم چلا رکھی ہے۔انہوں نے کہا کہ سائوتھ فلم انڈسٹری کو ان سے کوئی مسئلہ نہیں ہے لیکن جب سے مودی کے خلاف آواز اٹھائی تب سے ہندی فلم انڈسٹری نے انہیں کام دینا بند کردیا۔پرکاش راج نے کہا کہ گوری لنکیش کے قتل نے مجھے بہت پریشان کیا، وہ سوال اٹھاتی تھیںلیکن جب وہ آواز خاموش ہوگئیں تو مجھے اپنا آپ بھی مجرموں جیسا لگا۔انہوں نے کہا کہ نریندر مودی نے دو کروڑ نوکریاں دینے اوربلیک منی ختم کرنے کی باتیں کر کے بھارت کو امید دی، لیکن ساڑھے تین سال بعد بھی یہ کام نہیں ہو سکے۔