اوگرا کی مالی سال2018-19ء کے سالانہ ترقیاتی منصوبوں کے تحت ایل پی جی کے فروغ کیلئی33 لائسنسوں کے اجراء کی تجویز

ہفتہ مئی 14:30

اسلام آباد۔5 مئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 05 مئی2018ء) تیل وگیس ریگولیٹری اتھارٹی((اوگرا)) نے مالی سال2018-19ء کے سالانہ ترقیاتی منصوبوں کے تحت ایل پی جی کے فروغ کیلئی33 لائسنسوں کے اجراء کی تجویزدی ہے جس سے شدید سرد موسم کے دوران اور دور افتادہ علاقوں کو ایل پی جی کی سہل فراہمی کو یقینی نبایا جاسکے گا۔ سرکاری ذرائع نے ’’اے پی پی‘‘ کو بتایا کہ ان تجاویزمیںایل پی جی کو ذخیرہ کرنے اور بھرنے کے عمل اورمارکیٹنگ کے 25لائسنس جاری کرنے کی تجویز بھی شامل ہے ۔

اوگرا کی مالی سال2016-17ء کی سالانہ رپورٹ کے مطابق اتھارٹی نے 2002ء سے گیس کے شعبہ کو چلانے کیلئے 21 مختلف کمپنیوں کو لائسنس جاری کئے جس کامقصد ملک کے مختلف علاقوں میں ترسیل اور فروغ کو یقینی بنانا تھا۔ اتھارٹی نے جن کمپنیوں کو لائسنس کا اجراء کی تجویز دی ہے ان میں سوئی سدرن گیس پائپ لائن کمپنی لمیٹڈ، پاکستان پٹرولیم لمیٹڈ، تیل و گیس ڈویلپمنٹ کمپنی لمیٹڈ، فوجی فرٹیلائرز کمپنی لمیٹڈ، ماڑی پٹرولیم کمپنی لمیٹڈ،اینگرو کیمیکل پاکستان لمیٹڈ، سنٹر پاور جنریش لمیٹڈ، اینگروفرٹیلائزر لمیٹڈ، ای ٹی پی ایل یونیورسل گیس ڈسٹری بیوشن کمپنی،، گیسکوز ڈسٹری بیوشن کمپنی اور فوجی آئل ٹرمینل و ڈسٹری بیوشن کمپنی لمیٹڈ جیسی مختلف کمپنیاں شامل ہیں۔

(جاری ہے)

اوگرا نے مالی سال2018-19ء کے دوران ایل پی جی کے 33 لائسنسوں کے اجراء کی تجویز دی ہے جس سے ملک بھرمیں گھریلو اور کمرشل صارفین کو شدید سرد موسم میں بھی گیس کی بلاتعطل فراہمی میں بہتری آئے گی۔