مسلم لیگ(ن) آئندہ عام انتخابات میں پہلے سے زیادہ نشستیں لے کر کامیاب ہوگی،

جمہوریت کے بغیرملک ترقی نہیں کرسکتا، ہرادارے کو اپنی آئینی حدود میںرہ کر کام کرنا چاہئے، موجودہ حکومت نے بجلی اور گیس کے بحرانوں سے نمٹنے کے ساتھ ساتھ انفراسٹرکچر کے بڑے منصوبے مکمل کئے، امن وامان بحال کیا، ہمارا مقابلہ ان لوگوں سے ہے جن کے پاس اپنے دور حکومت کے کوئی منصوبے عوام کو بتانے کیلئے نہیں بلکہ ہمارے منصوبوں پر الزام تراشی اور تنقید کا سہارا ہے،مشرف اور زرداری کے 15سالہ دورمیں کوئی بڑا منصوبہ مکمل نہیں ہوا، نواز شریف نے اپنے عمل سے ثابت کیا کہ ن لیگ ملک میں شرافت، عزت اور وقار کی سیاست کرتی ہے ،جو خود کچھ نہیں کرسکتا وہ صرف الزام لگاتا ہے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا نارووال میں16 ارب روپے کی لاگت سے نارووال کو سیالکوٹ لاہور موٹروے سے منسلک کرنے کی چاررویہ شاہراہ کے سنگ بنیاد کی تقریب سے خطاب

ہفتہ مئی 16:19

مسلم لیگ(ن) آئندہ عام انتخابات میں پہلے سے زیادہ نشستیں لے کر کامیاب ..
نارووال۔5 مئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 05 مئی2018ء) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ مسلم لیگ(ن) آئندہ عام انتخابات میں پہلے سے زیادہ نشستیں لے کر کامیاب ہوگی، جمہوریت کے بغیرملک ترقی نہیں کرسکتا، ہرادارے کو اپنی آئینی حدود میںرہ کر کام کرنا چاہئے، موجودہ حکومت نے بجلی اور گیس کے بحرانوں سے نمٹنے کے ساتھ ساتھ انفراسٹرکچر کے بڑے منصوبے مکمل کئے، امن وامان بحال کیا، ہمارا مقابلہ ان لوگوں سے ہے جن کے پاس اپنے دور حکومت کے کوئی منصوبے عوام کو بتانے کیلئے نہیں بلکہ ہمارے منصوبوں پر الزام تراشی اور تنقید کا سہارا ہے،مشرف اور زرداری کے 15سالہ دورمیں کوئی بڑا منصوبہ مکمل نہیں ہوا، نواز شریف نے اپنے عمل سے ثابت کیا کہ ن لیگ ملک میں شرافت، عزت اور وقار کی سیاست کرتی ہے جو خود کچھ نہیں کرسکتا وہ صرف الزام لگاتا ہے۔

(جاری ہے)

وہ ہفتہ کو نارووال میں16 ارب روپے کی لاگت سے نارووال کو سیالکوٹ لاہور موٹروے سے منسلک کرنے کی چاررویہ شاہراہ کے سنگ بنیاد کی تقریب سے خطاب کررہے تھے ۔ اس موقع پر وزیرداخلہ پروفیسر احسن اقبال نے بھی خطاب کیا جبکہ وزیراطلاعات ونشریات مریم اورنگزیب،، خواجہ آصف اوردیگر بھی اس موقع پر موجود تھے۔۔وزیراعظم نے کہا کہ ملک کی خدمت اور عزت کی سیاست مسلم لیگ(ن) کا منشور ہے یہی وہ طریقہ ہے جس پر محمد نواز شریف نے عمل کیا،،ن لیگ ملک میں عزت ووقارکی سیاست کرتی ہے، وہ گالم گلوچ ، لعن طعن کی سیاست نہیں کرتی، شرافت اور خدمت کی سیاست کرتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ 16ارب روپے لاگت کے اس منصوبے کی ثمر ات جلد یہاں کے عوام تک پہنچیں گے، نوازشریف کا آج ایک اوروعدہ ہم نے پورا کردیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ 2013ء میں جب ہم نے اقتدار سنبھالا تو نواز شریف نے فیصلہ کیا تھا کہ وہ منصوبوں کا سنگ بنیاد نہیں بلکہ ان کا افتتاح کرنے کی پالیسی پرعمل پیرا ہوںگے، مجھے وزارت عظمیٰ کا منصب سنبھالے 8ماہ ہوچکے ہیں اور ہر ہفتے سینکڑوں ارب روپوں کے منصوبوں کا افتتاح ہورہا ہے ، یہ منصوبے موجود دور میں ہی شروع اورمکمل کئے گئے ، اس کے علاوہ کئی دہائیوں سے التواء کا شکار منصوبے بھی ہم نے مکمل کئے جتنے ترقیاتی کام موجودہ دور حکومت میں ہوئے ہیں گذشتہ65 سال میں اس کی مثال نہیں ملتی، مشرف کے 10اور زرداری کے 5سالہ ادوار میں ایک منصوبہ بھی مکمل نہیںکیا گیا، اس دورمیں بھی وسائل دستیاب تھے۔

انہوں نے کہا کہ یہ اللہ تعالیٰ کا کرم ہے کہ انہوں نے وسائل کے ساتھ سوچ اورہمت دی اور یہ منصوبے مکمل ہوکر پاکستان کی ترقی کا حصہ بن رہے ہیں ، سیالکوٹ لاہور موٹر وے پہلے بھی بن سکتی تھی تاہم پہلے کیوں نہیں بنائی گئی۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہمارا مقابلہ ان لوگوں سے ہے جن کے پاس عوام کودینے کیلئے کچھ نہیںوہ عوام کو اپنی کارکردگی نہیںبتا سکتے کہ جب ہم اقتدار میں تھے تو ہم نے کون سا منصوبہ مکمل کیا وہ صرف الزامات یا تنقید کرسکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ آج کسی بھی شعبہ کو دیکھ لیں اس میں بہتری ہے ، یہ مسلم لیگ(ن) اورنواز شریف کی سوچ کی فتح ہے، ملک میں مشکلات ابھی بھی ہیں، ہم نے بجلی گیس کے بحران سے نمٹنے کے ساتھ ساتھ ترقیاتی کاموں، اقتصادی زونز، ہوائی اڈوں ، بندرگاہوں سمیت بڑے منصوبوں پرکام کیا،2013ء کے عام انتخابات کے فیصلے کے ثمرات پاکستان کے عوام کو ملے ہیں، امن وامان کی صورتحال 2013ء کے مقابلہ میں کئی درجے بہتر ہے،معیشت مضبوطی کی طرف گامزن ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہی ووٹ اورجمہوریت کی طاقت ہے،آپ کا ووٹ پاکستان کے مستقبل کا فیصلہ کرتا ہے، چیلنجزآج بھی ہیں تاہم ہم نے چینلجز کا بھرپورمقابلہ بھی کیا اور ترقی کا سفرجاری بھی رکھا۔ وزیراعظم نے کہا کہ ماضی میں جب کسی منتخب وزیراعظم کو ہٹایا گیا تو اس کے ایم این اے تتر بتر ہوگئے لیکن یہاں پر پارٹی نے جس پر ہاتھ رکھا وہ وزیراعظم بن گیا اور تعمیروترقی کا سفر دوبارہ شروع ہوگیا اگریہ انتشار نہ ہوتا تو پاکستان بہت ترقی کرتا۔

وزیراعظم نے کہا کہ ایسے انتشار اور مداخلت کا اثر پاکستان پر پڑتا ہے، اداروں کو اپنے آئینی داروں میں رہ کر کام کرنا چاہئے، عدالتوںکا کام حکومت چلانا نہیں، حکومت کا کام عدلیہ کا نہیں، الیکشن کمیشن کاکام انتخابات کرانا ہے ملک چلانا نہیں۔ انہوں نے کہا کہ منتخب حکومت آخری منٹ تک اپنی مدت پوری کرے گی ، کوئی یہ نہ کہے کہ منصوبوں کا اعلان پری پول رگنگ ہے یہ پاکستان کے عوام کے مفاد کے خلاف ہے،31 مئی رات 12بجے تک ہم کام کرتے رہیں گے، الیکشن کمیشن کو میرا مشورہ ہے کہ وہ 60 دن میں عام انتخابات کرائے اور ان میں کوئی رکاوٹ نہ آنے دے، بہت سے لوگوںکی خواہش ہے کہ انتخابات نہ ہوں،30 جولائی سے پہلے عام انتخابات کاانعقاد آئینی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ جو لوگ آج انتخابات سے گھبراتے ہیں ان کو مشورہ ہے کہ اپنے کام پر دھیان دیں تاکہ عوام کو فیصلے کا موقع ملے اورجمہوریت کا سفر جاری رہے، اس کے بغیر ملک ترقی نہیںکرسکتا صرف جمہوریت کی موجودگی میں ہی ملک ترقی کرسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسے کام مت کئے جائیں جن سے ملک اندھیروںمیں چلا جائے یا ترقی متاثر ہو۔ موجودہ حکومت ہر شعبہ میں استحکام لائی ہے جس ملک کو کوئی65 ڈالر دینے کو تیار نہیں تھا وہاں پر65ارب ڈالرکے منصوبے چل رہے ہیں، اربوں ڈالرکی سرمایہ کاری پر ملک تیار ہیں ، اس سے نہ صرف معیشت بڑھے گی بلکہ روزگار کے مواقع بھی میسرآئیں گے ۔

انہوںنے کہا کہ ملک عدالتی فیصلوں سے ترقی نہیں کرسکتا اورنہ ہی نیب کے الٹے سیدھے کاموںسے ترقی کرتا ہے ، ملک کوچلنے دیں، آج بدقسمتی سے کوئی سرکاری افسر کام کرنے پر تیارنہیں۔ انہوں نے کہا کہ امید ہے کہ عوام ان چیزوں کو انتخابات میں مد نظر رکھیں گے،عوام نے آئندہ چند ماہ میں بڑا فیصلہ کرنا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ مسلم لیگ(ن) کے ووٹر کو کوئی شرمندگی یا پریشانی نہیںہونی چاہئے،مسلم لیگ(ن) کی کارکردگی سب کے سامنے ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ(ن) پہلے سے زیادہ نشستیں لے کر کامیابی حاصل کرے گی۔