چیف جسٹس کا بلوچستان میں 6 مزدوروں کے قتل پر ازخود نوٹس

Mian Nadeem میاں محمد ندیم ہفتہ مئی 17:12

چیف جسٹس کا بلوچستان میں 6 مزدوروں کے قتل پر ازخود نوٹس
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔05 مئی۔2018ء) چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے بلوچستان کے ضلع خاران میں 6 مزدوروں کے قتل پر ازخود نوٹس لیتے ہوئے چیف سیکرٹری اور آئی جی بلوچستان کو طلب کرلیا، از خود نوٹس کی سماعت 11 مئی کو سپریم کورٹ کوئٹہ رجسٹری میں ہوگی۔ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے کوئٹہ چرچ حملے کے متاثرین کو امداد نہ ملنے کا بھی نوٹس لیا اور چیف سیکرٹری بلوچستان سے جواب طلب کرلیا، اس نوٹس کی سماعت بھی 11 مئی کو کوئٹہ رجسٹری میں ہوگی۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز بلوچستان کے ضلع خاران کے علاقے لیجے میں نامعلوم مسلح شرپسندوں کی فائرنگ سے 6 مزدور ہلاک اور ایک زخمی ہوگیا تھا۔سیکورٹی ذرائع نے بتایا ہے کہ مزدور علاقے میں قائم ایک موبائل ٹاور پر کام کررہے تھے کہ مسلح شر پسندوں نے ان پر فائرنگ کردی ۔

(جاری ہے)

اس واقعے کے بارے میں لیویز ذرائع نے بتایا تھا کہ شرپسند عناصر فائرنگ کرنے کے بعد جائے وقوع سے فرار ہو گئے تھے۔

لیویز ذرائع نے بتایا تھا کہ ہلاک ہونے والے مزدوروں کا تعلق صوبہ پنجاب سے تھا۔یاد رہے کہ صوبہ بلوچستان رقبے کے لحاظ سے پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے جو فرقہ وارانہ کشیدگی اور شدت پسندوں کی سرگرمیوں کا شکار ہے۔جہاں مختلف تعمیراتی کاموں میں مصروف مزدوروں، سرکاری افسران اور حکومتی عہدیداروں کے اغوا اور قتل کے واقعات سامنے آتے رہتے ہیں۔

صوبے کی انتظامیہ نے ان دہشت گرد گروپوں کے خلاف آپریشنز اور کارروائیوں کا آغاز کررکھا ہے جس کے نتیجے میں سینکڑوں کی تعداد میں دہشت گردوں کو ہلاک اور گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا جاچکا ہے۔ صوبائی انتظامیہ نے متعدد مرتبہ اس بات کا دعویٰ کیا ہے کہ بلوچستان میں ہونے والی دہشت گردی کی کارروائیوں کے پیچھے ہندوستان کی خفیہ ایجنسی ”را“ ملوث ہے۔