سید غلام شاہ جیلانی نے حضرت لال شہباز قلندر کے عرس کی تقریبات کا افتتاح کردیا

ہفتہ مئی 17:48

جامشورو (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 05 مئی2018ء) حضرت لال شہباز قلندر کے 766 ویں عرس مبارک کی تقریبات کا باقاعدہ افتتاح وزیراعلی سندھ کے معاون خصوصی برائے اوقاف سید غلام شاہ جیلانی نے ہفتہ کی صبح مزار پر چادرچڑہا کر اور دعا سے کیا۔ اس موقع پر صوبائی سیکریٹری اوقاف منور علی مہیسر، ڈپٹی کمشنر جامشورو کیپٹن(ر)فرید الدین مصطفی، ایس ایس پی پرویز احمد عمرانی اور دیگر عملدار موجود تھے۔

مزار پر چادر چاڑہنے کے بعد میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے سید غلام شاہ جیلانی نے کہا کہ سندھ کی دھرتی اولیاں اور صوفیوں کی دھرتی ہے جنہوں نے ہمیشہ امن، پیار اور بھائیچارگی کا درس دیا ہے، اس وجہ سے یہ دھرتی امن و پیار کا مرکز رہی ہے،موجودہ دور کے حالات کو نظر میں رکھتے ہوئے دہشتگردی، عدم برداشت، معاشرے سے انتہاپسندی اور منفی رجحانات کے خاتمے کے لئے صوفی ازم کے پیغام کو عام کرنے کی ضرورت ہے۔

(جاری ہے)

ان کا مزید کہنا تھا کہ اس وقت قلندر کی نگری میں بیس لاکھ عقیدتمند موجود ہیں، عرس مبارک کا افتتاح کرنے کے لئے گورنر سندھ کو دعوت دی گئی تھی مگر وہ مصروفیات کے باعث نہیں آسکے ہیں، زائرین کو تکالیف سے بچانے کے لئے درگاہ کو خالی کرائے بغیر عرس مبارک کی تقریبات کا افتتاح کیا گیا ہے، گرمی کو نظر میں رکھتے ہوئے لال سائین کے زائرین کے لئے ضلعی انتظامیہ جامشورو، اوقاف، صحت اور پولیس سمیت متعلقہ محکموں کی طرف سے بھرپور انتظامات کئے گئے ہیں۔

پانی،، جوسز، او آر ایس سمیت گرمی سے بچا کے لئے دوائیں اور دیگر مطلوبہ اشیا وافر مقدار میں مختلف مقامات پر زائرین میں مفت تقسیم کی جارہی ہیں۔ لوڈ شیڈنگ سے متعلق ایک سوال پر محکمہ اوقاف کے معاون خاص نے کہا کہ حیسکوعملداروں کو لوڈشیڈنگ نہ کرنے کی ہدایت کی گئی تھی جس پر انہوں نے لوڈشیڈنگ نہ کرنے کا یقین دلایا تھا، اس کے باوجود بھی اگر کہیں پر لوڈشیڈنگ ہورہی ہے تو حیسکو انتظامیہ کو فوری طور پر ایکشن میں آکر بجلی بحال کرنی چاہئے۔

ڈپٹی کمشنر جامشورو کیپٹن(ر)فرید الدین مصطفی نے کہا کہ ملک کے کونے کونے سے آنے والے لال سائیں کے زائرین کو خوش آمدید کہتے ہیں، انتظامیہ کی طرف سے زائرین کی سہولیات کے لئے بھرپور انتظامات کئے گئے ہیں، اس کے علاوہ سیکیورٹی کے بھی سخت انتظامات کئے گئے ہیں، مختلف مقامات پر ایک سو سے زائد ٹھنڈے پانی کی سبیلیں اور شاورز لگائے گئے ہیں ، کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لئے چالیس ایمرجنسی ریسپانس سینٹرز بھی قائم کئے گئے ہیں، زائرین سے گذارش ہے کہ وہ پولیس اور ضلعی انتظامیہ سے بھرپور تعاون کریں تاکہ عرس مبارک کی تقریبات خیر و خوبی کے ساتھ اختتام پذیر ہوسکیں۔

چیف ایڈمنسٹریٹر اوقاف منور علی مہیسر نے بتایا کہ ضلعی انتظامیہ جامشورو اور محکمہ اوقاف کی طرف سے مختلف مقامات پر ٹھنڈے پانی کی سہولیات کے علاوہ تین لاکھ سے بھی زیادہ منرل واٹر کی بوتلیں اور پچاس ہزار جوسز کے پیکٹز کا بھی انتظام کیا گیا ہے جو زائرین میں مفت تقسیم کی جارہی ہیں۔ ایک سوال پر ایس ایس پی جامشورو پرویز احمد عمرانی نے کہا کہ لیڈیز زائرین کے کانوں سے سونی بالیاں چھیننے میں ملوث ایک گروہ کو گرفتار کر لیا گیا ہے جس میں ایک مرد اور ایک عورت شامل ہے، جبکہ اس کے علاوہ چار جیب کتروں کو بھی گرفتار کرکے لاکپ اپ کردیا گیا ہے، مزید تفیش جاری ہے، سیکیورٹی کے حوالے سے انتہائی سخت اقدامات اٹھائے گئے ہیں، زائرین کو گذارش کی جاتی ہے کہ وہ پولیس سے بھرپور تعاون کریں، کیونکہ پولیس ان کی ہی سیکیورٹی کے لئے کام کررہی ہے، اس دوران اگر زائرین کو معمولی تکلیف آتی ہے تو اس کو درگذر کیا جائے، کسی بھی مشکوک شخص یا سرگرمی کی اطلاع متعلقہ تھانے یا کمان اینڈ کنٹرول روم پر فوری طور پر دی جائے۔