مظفرآباد ‘ دس ماہ کے دوران ترقیاتی پروگراموں میں 21ارب 46کروڑ بجٹ کے خلاف 61فیصداخراجات کئے گئے

اتوار مئی 13:00

مظفرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 06 مئی2018ء) آزادکشمیر کے سرکاری ادارہ جات میں مالی سال کے دس ماہ کے دوران ترقیاتی پروگراموں میں 21ارب 46کروڑ بجٹ کے خلاف 61فیصداخراجات کئے گئے آئندہ دو ماہ کے دوران 6ارب سے زائد 30%فنڈز خرچ کرنے ہونگے ، بلدیات ، تعلیم ، صحت جیسے بڑے محکموں کی کارگردگی مایوس کن ثابت ہوئی ہے ، تاہم آزادکشمیر کے بڑے منصوبوں پر بجٹ کے بعد اعداد و شمار کو آگے پیچھے کرکے مشکلات کے ساتھ اسلام آباد فنانس ڈویژن کو لولی پاپ دے کر پرسکون کرنے میں کامیاب تو ہوئے ہیں ، تاہم آئندہ مالی سال کی کارگردگی مشروت کردی گئی ہے ، وزیر اعظم آزادکشمیر کی زیر صدارت منعقد ہونے والا جائزہ اجلاس30اپریل تک جائزہ اجلاس میں یہ انکشاف سامنے آیا ہے کہ دس ماہ میں ترقیاتی بجٹ کا 61%اصراف ممکن ہوسکا ہے جبکہ فقط دو ماہ کے دوران 39%اخراجات ہونے باقی ہیں جس میں بڑے محکمہ جات ، تعلیم ، صحت ، لوکل گورنمنٹ، صنعت و حرفت میں اخراجات کا مایوس کن رزلٹ سامنے آیا ہے ، دو ماہ کے دوران 50فیصد کے قریب اخراجات اِن محکمہ جات کیلئے تقریباً ناممکن ہیں جن محکمہ جات میں ترقیاتی بجٹ کے اصراف کی صورت حال اطمنان بخش نہیں ہے وہاں فرضی اور کاغذی کارگردگی کے ذریعے قومی خزانے کو کروڑوں کا ٹیکہ لگانے کیلئے مافیا سرگرم ہوگئے ہیں مسلم لیگ (ن) کی حکومت تمام تر دعووں کے باوجود کرپشن بند کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے ، سرکاری اعداد و شمار کے مطابق آزادکشمیر کا سالانہ ترقیاتی پروگرام 2017/18ء کیلئے 21ارب 48کروڑ روپے مختص تھے جو 30اپریل تک 21ارب 17کروڑ 40لاکھ کے فنڈز جاری ہوچکے ہیں ، 30اپریل تک اخراجات کی شرخ 61%رہی یہ 39%سے زائد اخراجات ، 60دنوں کے اندر ممکن بنانے کیلئے جنگی صورت حال کے تحت کام کرنا پڑے گا محکمہ ذراعت اور اُس کے پانچ منسلک اداروں کیلئے 49کروڑ کا ترقیاتی بجٹ مختص تھا ، 20ارب تک تمام رقم جاری کی جاچکی ہے ، جبکہ اخراجات کی شرخ 69%رہی محکمہ ذراعت نے 2ماہ کے عرصے میں 15کروڑ وروپے کے اخراجات کرنے ہیں ، سول ڈیفنس اور ایس ڈی ایم اے کا ترقیاتی بجٹ 100ملین تھا جس کے خلاف تمام رقم جاری ہوچکی ہے ، 30اپریل تک 58%اخراجات سامنے آئے ہیں جبکہ بقایا 2ماہ میں42%اخراجات ہونے باقی ہیں،پانچ ترقیاتی ادارہ جات کیلئے 330ملین کاترقیاتی بجٹ مختص تھا جس کے خلا ف اب تک صرف 135ملین جاری ہوسکے ہیں ، اخراجات کی شرخ 18%رہی جبکہ 72%اخراجات ہونے باقی ہیں آزادکشمیر کا سب سے بڑا محکمہ ، محکمہ تعلیم کیلئے 1225ملین روپے کا ترقیاتی بجٹ رکھا گیا تھا جس کے خلا ف30اپریل تک تمام رقم جاری ہوچکی ہے البتہ اخراجات کی شرخ 51%رہی ، 49فیصد اخراجات ہونے باقی ہیں ، محکمہ ماحولیات کیلئے 52ملین روپے کا ترقیاتی بجٹ مختص تھا جس کے اخراجات کی شرخ 43%رہی ، 57%اخراجات ابھی باقی ہیں ، محکمہ جنگلا ت کیلئے 631ملین روپے کا ترقیاتی بجٹ مختص تھا جس کے خلاف تمام رقم جاری ہونے کے بعد اخراجات کی شرخ 74%جبکہ 26%اخراجات ہونے باقی ہیں ، محکمہ صنعت و حرفت کیلئے 348ملین روپے کا ترقیاتی بجٹ مختص تھا جس کی تمام رقم جاری ہوچکی ہے ، اخراجات کی شرخ 24%جبکہ 76%اخراجات ہونے باقی ہیں ، محکمہ ٹرانسپورٹ کیلئے 20ملین روپے کا ترقیاتی بجٹ مختص کیا گیا تمام رقم جاری ہوچکی ہے ،محکمہ انفارمیشن اینڈ میڈیا ڈولپمنٹ کیلئے 40ملین روپے ترقیاتی بجٹ مختص تھا تمام رقم جاری ہوچکی ہے ،محکمہ انفارمیشن ٹیکنالوجی کیلئے 225ملین مختص تھے تمام رقم جاری ہوچکی ہے ، محکمہ لوکل گورنمنٹ اور دیہی ترقی کیلئے 2005ملین روپے رکھے گئے تھے تمام رقم جاری ہوچکی ہے ،محکمہ فیزیکل پلانٹ اینڈ ہائوسنگ کیلئے 1639ملین روپے ترقیاتی بجٹ کیلئے مختص تھے ،1635ملین روپے جاری ہوچکے ہیں ،محکمہ ریکنڈیشن کیلئے ترقیاتی بجٹ 100ملین مختص تھا ، تمام رقم جاری ہوچکی ہے ، محکمہ ریسرچ اینڈ ڈولپمنٹ کیلئے 163ملین روپے کا بجٹ مختص تھا تمام رقم جاری ہوچکی ہے ،محکمہ سوشل ویلفیئر کے لئے ترقیاتی بجٹ مختص کیا گیا ہے اور اُسکی رقم بھی جاری ہوچکی ہے ، محکمہ سپورٹس کیلئے 180ملین روپے کا ترقیاتی بجٹ مختص تھا تمام رقم جاری ہوچکی ہے محکمہ صحت کیلئے 220ملین روپے کا ترقیاتی بجٹ مختص تھا ، تمام رقم جاری ہوچکی ہے ، کمیونیکیشن اینڈ ورکرز کیلئے 10544ملین روپے کا ترقیاتی بجٹ مختص تھا وہ بھی جاری ہوچکی ہے ۔