احسن اقبال پر قاتلانہ حملہ،ملزم عابد کی بہن بھی منظر عام پر آگئی

بھائی کچھ بھی نہیں کرتا ، پتہ نہیں احسن اقبال پر حملہ کیوں کیا؟ وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر فائرنگ کرنے والے ملزم کی ہمشیرہ کا بیان

Sumaira Faqir Hussain سمیرا فقیرحسین پیر مئی 11:56

احسن اقبال پر قاتلانہ حملہ،ملزم عابد کی بہن بھی منظر عام پر آگئی
نارووال (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 07 مئی 2018ء) : وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر فائرنگ کرنے والے ملزم کی ہمشیرہ کا بیان بھی سامنے آ گیا ہے۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق ملزم عابد کی ہمشیرہ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ بھائی کچھ بھی نہیں کرتا تھا، بھائی نے وزیر داخلہ پر حملہ کیوں کیا وجہ نہیں جانتے ۔ انہوں نے کہا کہ بھائی کے کسی جماعت سے تعلق ہونے سے متعلق بھی کچھ علم نہیں ہے۔

یاد رہےکہ وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال پر گذشتہ روز قاتلانہ حملہ ہوا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال پرقاتلانہ حملہ کرنے والا کنجرورکے گاؤں ویرم کا رہائشی ہے ۔ملزم عابد کے 2بھائی ہیں والد کا نام محمد حسین ہے۔ملزم عابد حسین پرچون کی دکان پرکام کرتا ہے۔ملزم کی تاریخ پیدائش 13مئی 1995ء ہے۔

(جاری ہے)

ملزم عابددبئی بھی جاچکا ہے۔

دوسری جانب ڈی سی ناروال کا کہنا ہے کہ ملزم عابد سے متعلق تفتیش کی جارہی ہے۔انہوں نے بتایا کہ ملزم پرپہلے بھی ایک ایف آئی آر درج ہوچکی ہے۔تاہم انہوں نے یہ بتانے سے گریز کیا کہ ملزم کے خلاف کس تھانے میں ایف آئی آر درج ہوئی ہے۔واضح رہے وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال شکرگڑھ کی تحصیل کنجرورمیں عوامی جلسے سے خطاب کے بعدواپس جارہے تھے کہ ان پرنامعلوم ملزمان نے فائرنگ کردی۔

حملے کے فوری بعد احسن اقبال کے کزن عمران نے بتایا کہ احسن اقبال کے بازو پرگولی لگی ہے۔جس سے احسن اقبال شدید زخمی ہوگئے ہیں۔ تاہم احسن اقبال کوہسپتال منتقل کیا گیااور احسن اقبال کی حالت خطرے سے باہر ہے۔اور خیریت سے ہیں۔بعض اطلاعات کے مطابق ملزم نے احسن اقبال پردو فائر کیے جس میں ایک گولی احسن اقبال کے دائیں بازور پرلگی ہے۔۔پولیس نے فائرنگ کے واقعے کے بعد علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے،اور جائے وقوعہ کامعائنہ کیاکہ فائرنگ کس طرف سے کی گئی ہے۔ملزمان کہاں سے آئے اور کتنے افراد تھے ۔تاہم اسی اثناں میں جلسے کے شرکاء نے ملزم کوپکڑ کر اسے مارا پیٹا اور پھر پولیس کے حوالے کردیا تھا۔